The news is by your side.

Advertisement

یمن : میڈیکل ٹیم دھڑ جڑے بچوں کو بچانے کیلئے کوشاں

ریاض/صنعاء : شاہ سلمان ریسکیو سینٹر پیدائشی طور پر ایک دھڑ سے جڑے بچوں کو آپریشن کے لیے یمن سے سعودی عرب منتقل کرنے کی کوشش کررہا ہے۔

تفصیلات کے مطابق خانہ جنگی کا شکار ملک یمن میں کچھ روز قبل ایک دھڑ سے جڑے ہوئے بچوں کی پیدائش ہوئی ہے جنہیں آپریشن کے لیے فوری طور پر بیرون ملک منتقل کرنا پڑے گا تاکہ ان کی جان بچائی جاسکے۔

یمنی داکٹرز نے دو ہفتے قبل جنم لینے والے بچوں کو فوری طور پر علاج کے لیے بیرون ملک منتقل کرنے کا مطالبہ کیا تھا لیکن انہیں بیرون ملک منتقل کرنا تقریباً ناممکن ہے کیوں کہ صنعاء کا ہوائی اڈا جنگ کے باعث بند ہے۔

غیر ملکی میڈیا کا کہنا ہے کہ ڈاکٹر گزشتہ دو ہفتوں سے عبد ال خلیق اور عبد الرحیم کا علاج کررہے ہیں لیکن بچوں کا آپریشن کے بغیر زیادہ دن زندہ رہنا مشکل ہے۔

ڈاکٹر فیصل البابلی کا کہنا ہے کہ ایک دھڑ سے جڑے ہوئے بچوں کو علیحدہ کرنے کے لیے آپریشن کی مطلوب آپریشن کی سہولیات یمن میں میسر نہیں، اس لیے اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کی تنظیمیں بچوں کو بیرون ملک منتقل کرنے کا انتظام کریں۔

ڈاکٹر فیصل کا کہنا تھا کہ بچوں کو دو ہفتوں سے مصنوعی سانس فراہم کی جارہی ہے تاکہ وہ زندہ رہ سکیں۔

یمنی ڈاکٹر نے بتایا کہ دونوں بچوں کا جسم مشترکا جبکہ اوپری اور زیریں دو الگ الگ حصّے ہیں اور دونوں کے سر بھی علیحدہ ہیں، دونوں بچوں کی پھیپھڑے، دل، نظام ہاضمہ اور ریڑھ کی ہڈیاں علیحدہ علیحدہ ہیں لیکن ان کا نچلہ حصّہ ملا ہوا ہے یا علیحدہ یہ ایم آر آئی کے بعد واضح ہوگا۔

عرب میڈیا کے مطابق ڈاکٹرز نے بتایا کہ ایسے کیسز بہت کم سامنے آتے ہیں، مذکورہ بچوں کا جگر، گردے، ہاتھ اور ٹانگیں ایک ہی ہیں۔

سعودی عرب کے شاہ سلمان ریسکیو سینٹر کی طبی ٹیم کے سربراہ ڈاکٹر عبداللہ کا کہنا تھا کہ انسانیت کی خاطر بچوں کا آپریشن سعودی عرب میں کرنے کی کوشش کررہے ہیں اسی لیے یمنی ڈاکٹرز کی درخواست پر مثبت جواب دیا۔

ڈاکٹر عبداللہ نے واضح کیا کہ گزشتہ تین برس کے دوران شاہ سلمان اور ولی عہد محمد بن سلمان کی ہدایات پر صنعاء، صعدہ اور تعز سے تعلق رکھنے والے کئی جڑواں جڑے ہوئے بچے اور بچیوں کا سعودی عرب میں آپریشن کیا جا چکا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں