The news is by your side.

Advertisement

72سالہ ضعیف شخص نے کورونا کو 43 مرتبہ کیسے شکست دی ؟ ڈاکٹرز حیران

لندن : دنیا میں کوویڈ 19 سے اب تک سب سے زیادہ عرصے تک متاثر رہنے والے شخص میں 290 دن تک کورونا وائرس ٹیسٹ مثبت آیا اور وہ بیماری کے باعث 7 بار ہسپتال میں زیرعلاج رہ چکا ہے۔

برطانیہ سے تعلق رکھنے والے 72 سالہ ڈیو اسمتھ نے بی بی سی کو بتایا کہ اب تک 43 بار اس کا کوویڈ ٹیسٹ مثبت آچکا ہے اور ایک بار تو وہ مسلسل5 گھنٹے تک کھانستا رہا تھا۔

اس کی بیماری کو اب تک طویل ترین متحرک کووڈ کیس قرار دیا جارہا ہے۔ اس عرصے کے دوران ڈیو اسمتھ کا وزن 63 کلو سے زیادہ کم ہوچکا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ اتنے زیادہ ٹیسٹ مثبت رہنے کے بعد وہ ہار ماننے اور مرنے کے لیے تیار تھے۔ انہوں نے اپنی اہلیہ کو بھی کہا کہ مجھے جانے دو، میں خلا میں معلق ہوں مگر حال بہت خراب ہے۔

ڈیو اسمتھ نے میڈیا کو بتایا کہ ان کی اہلیہ نے 5مرتبہ تدفین کے انتظامات پر بھی کام شروع کردیا تھا۔ ان کی اہلیہ لنڈا نے بتایا کہ انہیں بھی لگتا تھا کہ ان کا شوہر کورونا کے باعث ہلاک ہوجائے گا۔

رپورٹ کے مطابق ڈیو اسمتھ میں بیماری کی ایک ممکنہ وجہ یہ ہے کہ ماضی میں خون کے سرطان کی وجہ سے انہیں کیموتھراپی دی گئی تھی۔

ان کا علاج دوا ساز کمپنی ری جینرون کی تیار کردہ اینٹی وائرل ادویات سے کیا گیا اور اب سائنسدانوں کی جانب سے تحقیق کی جارہی ہے تاکہ وہ سمجھ سکیں کہ وائرس میں کس طرح میوٹیشنز ہوتی ہیں۔

اسی اینٹی وائرل کاک ٹیل کے نتیجے میں وہ اب کورونا وائرس بار بار کو شکست دینے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔

اس سے قبل جون 2021 کے شروع میں ایک اور کیس کی رپورٹ سامنے آئی تھی جو ایچ آئی وی سے متاثر 36 سالہ خاتون کا تھا۔ اس خاتون میں کورونا وائرس 216 دن سے موجود تھا اور اس عرصے میں وائرس میں 30 سے زیادہ میوٹیشنز ہوئیں۔

ڈیو اسمتھ برطانیہ میں کورونا وائرس کی پہلی لہر کے دوران کوویڈ کا شکار ہوئے تھے اور لانگ کوویڈ کے بیشتر مریضوں کے برعکس جن کو علامات کو تو سامنا تھا مگر وائرس جسم سے کلیئر ہوچکا تھا، ڈیو اسمتھ کو جب سے ہی مسلسل بیماری کا سامنا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں