The news is by your side.

Advertisement

میو اسپتال میں مریض کی ہلاکت، غلام عمران کو کورونا وائرس نہیں تھا، محکمہ صحت

لاہور : میو اسپتال میں کورونا وائرس کے شبہ میں ہلاک ہونے والا شخص جگر کے عارضے میں مبتلا تھا، مذکورہ مریض ایران سے براستہ مسقط پاکستان آیا تھا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان میں کرونا وائرس سے مبینہ طور  پر  پہلے مریض کی ہلاکت کی خبر غلط نکلی، میو اسپتال کے سی ای او کی جانب سے  جاری رپورٹ میں کہا گیا تھاکہ  کورونا وائرس کا مشتبہ مریض دم توڑ گیا۔

اس حوالے سے میو اسپتال کے سی ای او پروفیسراسد اسلم نے میڈیا کو بتایاہےکہ گزشتہ رات 50سال کے شہری کو حافظ آباد سے لاہور کے میواسپتال لایا گیا تھا، مشتبہ مریض ایران سے مسقط اور پھر وہاں سے پاکستان آیا تھا اس میں کورونا کی کچھ علامات بھی ظاہر ہوئی تھیں۔

انہوں نے بتایا کہ مریض کے کوروناوائرس ٹیسٹ کے نمونے لیبارٹری بھجوائے ہیں، تاہم بعد ازاں کورونا وائرس ٹیسٹ کی حتمی رپورٹ کے بعد یہ حقیقت سامنے آئی کہ مریض کورونا وائرس کا شکار نہیں بلکہ اسے جگر کی بیماری لاحق تھی، مریض کی ہلاکت کی رپورٹ منفی آئی۔

سی ای او میو اسپتال نے کہا تھاکہ مریض کو بلیڈنگ، سانس میں دشواری، نزلہ زکام اور بخار تھا، تاہم  غلام عمران کو کورونا وائرس نہیں تھا مریض میو اسپتال کے آئسولیشن وارڈز میں زیرعلاج تھا، غلام عمران جگر کی بیماری میں مبتلا تھا جسے کورونا کی علامات تھی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں