The news is by your side.

Advertisement

پنجاب میں رات دس بجے ہوٹلوں اور مارکیٹوں کو بند کرنے کا فیصلہ

لاہور : وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے رات 10 بجے ہوٹلوں ریستوران اور شاپنگ مالز بند کرنے کا اعلان کردیا، دفعہ144نافذ اور تفریحی مقامات پر سیاحوں کے جانے پر پابندی عائد کردی گئی۔

کرونا وائرس کے حوالے سے میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے وزیر اعلیٰ عثمان بزدار نے کہا کہ پنجاب میں کرونا وائرس کے مریضوں کی تعداد 28 ہے، پنجاب میں ہیلتھ ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے، کرونا وائرس سے نمٹنے کیلئے 3 عارضی اسپتال قائم کیے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ریستوران، شاپنگ مالز رات کو 10 بجے بند کرانے کا فیصلہ کیا گیا ہے جبکہ میڈیکل اسٹورز اور منڈیاں اس پابندی سے مستثنیٰ ہیں اس کے علاوہ تفریحی مقامات پر سیاحوں کے جانے پر پابندی عائد کردی گئی ہے اور سرکاری دفاتر میں ملازمین کی تعداد کم سے کم کی جارہی ہے۔

وزیر اعلیٰ عثمان بزدار نے بتایا کہ کرونا وائرس سے نمٹنے کیلئے236 ملین پہلے ہی گرانٹ جاری کی جاچکی ہے، کرونا سے نمٹنے کیلئے5 ارب روپے کا فنڈ قائم کیا جائے گا۔

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کا کہنا تھا کہ پنجاب حکومت تمام ضروری اقدامات اٹھارہی ہے، لوگوں کی حفاظت کیلئےجو کچھ کرسکتے ہیں کررہے ہیں،236ملین روپے وزارت صحت کے حوالے کردیئے ہیں، ہم نے5ملین فنڈ قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے،
ضرورت پڑی تو فوری فیلڈ اسپتال قائم کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ پنجاب میں ہیلتھ ایمرجنسی ڈیکلیئرکردی گئی ہے، وزیراعظم عمران خان نے تمام سہولتوں کا جائزہ لیا، شاپنگ مال اورریسٹورنٹ رات10بجےتک بند کیے جائیں گے، قرنطینہ کی سہولتوں کو مزید بہترکیا جائے گا،

وزیر اعلیٰ پنجاب کا کہنا تھا کہ بلوچستان حکومت کے ساتھ بھی مکمل تعاون کریں گے، پنجاب میں دفعہ144نافذ کردی ہے، پنجاب میں3اسپتال کوروناوائرس سے متعلق مختص کیے ہیں، ڈی جی خان میں لوگ قرنطینہ سینٹر میں سہولتوں سے مطمئن ہیں۔

عثمان بزدار نے کہاکہ وزیراعلیٰ بلوچستان سے خود رابطہ کروں گا، پنجاب میں28کورونا وائرس سے متاثرہ مریض ہیں، ہمارے پاس بہاولپور اور ڈی جی خان میں الگ الگ سہولتیں ہیں، کسی بھی ایمرجنسی کیلئے پنجاب حکومت تیار ہے۔

مزید پڑھیں : وزیراعلیٰ پنجاب کا ماسک، حفاظتی کٹ، سینیٹائزر تیار کرنے کا حکم

واضح رہے کہ گزشتہ روز لاہور میں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی زیر صدارت کرونا وائرس سے متعلق اجلاس ہوا تھا جس میں کرونا کے معاشی اثرات کاجائزہ لینے کے لیے وزیر خزانہ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کی گئی۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ ڈپٹی کمشنر کی سربراہی میں سول سوسائٹی ارکان پر مشتمل کمیٹیاں بنائی جائیں گی، ڈسٹرکٹ کمیٹیاں کرونا سے نمٹنے کے لیے مقامی سطح پر اقدامات کرسکیں گی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں