The news is by your side.

Advertisement

جاپان، کرونا کا ممکنہ علاج، مریضوں پر آزمائش کی تیاری

ٹوکیو: جاپان میں ادویات بنانے والی کمپنی نے کروناوائرس کا علاج دریافت کرلیا جسے جلد ہی انسانوں پر آزمایا جائے گا۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق ’’ایویجن‘‘ نامی دوا کو انسانوں پر آزمانے سے متعلق تیاریاں حتمی مراحل میں داخل ہوگئیں، جلد جاپان میں کروناوائرس کے مریضوں پر استعمال کی جائے گی۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ نزلے سے لڑنے والی یہ دوا کروناوائرس کے مریضوں کا علاج کرے گی، ایونجر کی تیاری میں شامل کیے جانے والے طبی اجزاء کروناوائرس سے بھرپور مقابلے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

اینٹی کرونا ویکسین کی تیاری جاری، جون تک متعارف کرادی جائے گی

’’ مذکورہ دوا کو ٹیسٹ کے مراحل سے گزارنے کے بعد ثابت ہوا کہ ایویجن ایبولا وائرس کا بھی علاج کرسکتی ہے، دوا انسانی خلیوں میں شمار ہوکر وائرس کی افزائش اور پھیلاؤ کو روکتی ہے‘‘

کمپنی کے مطابق ایویجن کو کروناوائرس کے خلاف استعمال کرنے کے لیے دو مراحل سے کامیابی سے گزارا گیا تاہم اب تیسرے مرحلے میں کروناوائرس کے مریضوں پر آزمایا جائے گا۔ پہلے مرحلے میں دوا کے ’’کلینیکل ٹیسٹ‘‘ کیے گئے جس سے ثابت ہوا کہ ایونجر انسانی جسم کے لیے مضر نہیں ہے۔

اسی طرح دوسرے مرحلے میں بھی طبی ٹیسٹ کیے گئے جو کامیاب رہے۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ کروناوائرس کے مریضوں پر کامیاب ٹیسٹ کے بعد پوری دنیا میں دوا فروخت کی جائے گی۔ ماہرین نے خیال ظاہر کیا ہے کہ مذکورہ دوا دنیا میں کروناوائرس کی پہلی دوا ثابت ہوسکتی ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں