The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں جرگے کے حکم پرنوجوان جوڑا قتل

کراچی: شہر قائد میں ایک اور جوڑا غیرت کے نام پرجرگے کے ہاتھوں قتل ہوگیا، لڑکے کے اہل خانہ نے مقدمہ درج کرانے سے انکار کردیا۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے مومن آباد میٹروول کے رہائشی نصیب زر خان اور خاتون واجب سر خان کو تشدد کے بعد قتل کیا گیا تھا، دونوں کی لاشیں حب کے علاقے سے برآمد ہوئی تھیں۔

پولیس نے دوہرے قتل کی اس واردات کی تفتیش کی تو چونکا دینے والے والے حقائق سامنے آگئے، واقعے کا مقدمہ سرکار کی مدعیت میں قتل اور کاروکاری کی دفعات کے تحت درج کیا گیا ہے، دونوں مقتولین کا تعلق خیبر پختونخواہ کے علاقے کالا ڈھاکہ سے ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ آج سے لگ بھگ آٹھ ماہ قبل نصیب زر خان اپنے گھرو الوں سے جھگڑا کرکے چلا گیا تھا ۔ لڑکے کے جانے کے ایک ماہ بعد لڑکی بھی اپنے گھر سے لاپتہ ہوگیا ۔

گزشتہ آٹھ ماہ میں ایک بار بھی دونوں کے اہل خانہ نےدونوں کی گمشدگی کا مقدمہ درج نہیں کروایا۔ لڑکا اور لڑکی کے غائب ہونے پر خاندان کے بزرگوں کی جانب سے جرگہ بلایا گیا، جرگے کے عمائدین نے لڑکے اور لڑکی کو قتل کرنے کا فیصلہ کیا۔

پولیس کو لڑکا اور لڑکی ، دونوں کی لاشیں تشدد زدہ حالت میں حب سے ملیں۔ قتل کے بعد لڑکی کے اہل خانہ علاقہ چھوڑ کرفرار ہوگئے تھے، پولیس کا کہنا ہے کہ دونوں کو باقاعدہ منصوبہ بندی کے تحت قتل کیا گیا۔

دوسری جانب لڑکے کے اہل خانہ نے بھی اپنے بیٹے کے قتل کا مقدمہ درج کرانے سے انکار کردیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے مقدمے کی تفتیش ابھی جاری ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ سال ستمبر میں کراچی کے علاقے بھٹائی آباد میں پڑوسی سے بات کرنے پر صفدانہ نامی خاتون کو جرگے کے حکم پر قتل کردیا گیا تھا۔ معاملے کو جرگے میں لڑکی کاسسر لے کر گیا تھا۔ بعد ازاں پولیس نے ملزمان کو حراست میں لیا تھا اور شواہد اکھٹے کرنے کے لیے قبر کشائی بھی کی گئی تھی۔

سنہ 2017 میں پاکستان میں غیرت کے نام پر 343 خواتین کو قتل کردیا گیا تھا۔غیرت کے نام پر سب سے زیادہ پنجاب جبکہ سندھ ، خیبرپختونخواہ، بلوچستان بتدریج دوسرے تیسرے چوتھے نمبر پر خواتین کو قتل کیا گیا۔ تحریک التوا میں پیش کیے جانے والے اعداد و شمار کے مطابق سندھ میں 58 خواتین کو غیرت کی بھینٹ چڑھایا گیا تھا۔ یہ بھی یاد رہے کہ کراچی میں ہونے والے اس نوعیت کے زیادہ تر واقعات میں ملوث افراد کا تعلق خیبر پختوانخواہ سے ہوتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں