The news is by your side.

مچھر کالونی واقعے پرعدالت کا نوٹس، آئی جی سندھ طلب

کراچی: سندھ ہائی کورٹ نے مچھر کالونی واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے پیش رفت طلب کرلی ہے۔

تفصیلات کے مطابق دو روز قبل کراچی کے علاقے مچھر کالونی میں ٹیلی کام کمپنی کےملازمین پرہجوم نے حملہ کیا تھا اور انہیں برترین تشدد کے بعد موت کے گھاٹ اتاردیا تھا۔

اندوہناک واقعے پر سوشل میڈیا کا محاذ گرم ہوا اور صارفین نے بہیمانہ فعل پر آواز حق بلند کی اس کے علاوہ مختلف سیاسی ومذہبی رہنماؤں کی جانب سے انسانیت سوز واقعے پر شدید ردعمل کا اظہار کیا گیا تھا۔

اب چیف جسٹس سندھ ہائیکورٹ نے بھی واقعے کا نوٹس لیا ہے اور آئی جی سندھ، ڈی آئی جی ساؤتھ اور ایس ایس پی انویسٹی گیشن کو کل طلب کرلیا ہے۔

رجسٹرار سندھ ہائی کورٹ کی جانب سے جاری اعلامیہ میں کہا گیا کہ آئی جی سندھ سمیت تینوں افسران یکم نومبر کو ذاتی حیثیت میں پیش ہوں، چیف جسٹس نے واقعے کی پیش رفت رپورٹ بھی طلب کرلی ہے۔

واضح رہے کہ تین روز قبل کراچی کےعلاقے مچھر کالونی میں دلخراش واقعہ آیا تھا ، جہاں شہریوں نے نجی کمپنی کے دو ملازمین کو تشدد کرکے ہلاک کردیا تھا۔

علاقہ مکینوں کی جانب سے لاشوں کوجلانے کی کوشش کی گئی جبکہ ان کی کار کو بھی آگ لگا دی۔

ڈاکو کے شبے میں شہریوں کے تشدد سے 2 افراد کے بے دردی سے قتل کے واقعے کے عینی شاہد نے بھانڈا پھوڑا۔

یہ بھی پڑھیں:  ٹیلی کام کمپنی کے ملازمین کو تشدد کر کے قتل کرنے کا مقدمہ درج

عینی شاہد پولیس اہلکار نے بتایا کہ ہم لوگ انسدادپولیو ٹیم کے ساتھ موجود تھے، آگے ایک دم بھگدڑ مچ گئی، لوگوں نے بتایایہاں پر بچے اغواکرنے والے آئے ہیں۔

عینی شاہد کا کہنا تھا کہ ایک ٹیلی کام کمپنی کا انجینئر تھا اور دوسرا ڈرائیور تھا،ان کے پاس اسلام آباد نمبر کی گاڑی تھی۔

پولیس اہلکار نے بتایا کہ ہم جس گلی میں تھے اس کے برابر والی گلی میں یہ واقعہ ہوا، وہاں جا کر دیکھا تو ہمارے پولیس والوں کو بھی عوام مار رہی تھی، بیچ بچاؤکرنے کی کوشش کی تو انھوں نے پتھراؤکیا، میرے سر پر پتھر لگا جس سے میں شدید زخمی ہوگیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں