site
stats
عالمی خبریں

بھارتی عدالت کا ’تاج محل‘ بچانے کے لئے ’شمشان گھاٹ‘ ہٹانے کا حکم

نئی دہلی: بھارتی سپریم کورٹ نے اترپردیش کی حکومت کو ’تاج محل‘ کو آلودگی سے بچانے کے لئے شمشان گھاٹ منتقل کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کت مطابق سپریم کورٹ کے ایک جج نے تاج محل کے دورے کے دوران مشاہدہ کیا کہ عظیم تاج پرکو شمشان سے اٹھنے والے دھویں اور راکھ سے نقصان پہنچ رہا ہے جس کے سدباب کے لئے ان کی جانب سے لکھے جانے والے خط پر سپریم کورٹ نے شمشان منقتل کرنے کا فیصلہ دیا۔

واضح رہے کہ ہندو اپنے مردوں کو ان کے آخری انجام تک پہنچانے کے لئے لکڑیوں پر جلاتے ہیں تاہم بھارتی حکومت کوشاں ہیں کہ عوام لکڑیوں کے بجائے الیکٹرک شمشان کا استعمال کرنا شروع کردیں۔

عظیم میناروں اورپرشکوہ گنبد سے آراستہ تاج محل دنیا کی عظیم عمارتوں میں سے ایک ہے جس کی سیاحت کے لئے ہرسال لگ بھگ تیس لاکھ سیاح آتے ہیں۔

دریائے یمنا کے کنارے تعمیر اس پرشکوہ مقبرے کو مغل شہنشاہ شاہ جہاں نے اپمی محبوب ملکہ ممتاز محل کی یاد میں تعمیرکرایا تھا اور 1983 میں یونیسکو نے اسے عالمی ورثہ قرار دیا تھا۔

سنگ مرمر کا شاہکار تاج محل آلودگی کے سبب پیلاہٹ کا شکار ہے، بھارتی حکومت نے اس کی بحالی کے لئے کئی اقدامات کئے ہیں جن میں تاج کے ارد گرد واقع فیکٹریاں بند کی گئی ہیں جبکہ آگرہ شہر کو مسلسل بجلی فراہم کی جاتی ہے کہ عوام ڈیزل جنریٹر استعمال نہ کریں۔

عدالت نے اترپردیش کی حکومت کو حکم دیا ہے کہ شمشمان کی منتقلی کے حوالے سے 15 دن میں فیصلہ کرکے عدالت کو آگاہ کیا جائے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top