The news is by your side.

Advertisement

عدالت نے مساجد میں نماز کی ادائیگی پر پابندی کے خلاف درخواست مسترد کر دی

18 اپریل کو علما کے اجلاس میں مساجد میں نماز اور رمضان سے متعلق پالیسی وضع کی جائے گی: ڈپٹی اٹارنی جنرل

کراچی: سندھ ہائی کورٹ نے شہر قائد میں لاک ڈاؤن کے دوران مساجد میں نماز کی ادائیگی پر پابندی کے خلاف درخواست مسترد کر دی۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق سندھ ہائی کورٹ نے مساجد میں نماز کی ادائیگی پر پابندی کے خلاف درخواست ناقابل سماعت قرار دیتے ہوئے مسترد کر دی، عدالت کا کہنا تھا کہ انسانی زندگی محفوظ رکھنے کے لیے ایگزیکٹو اختیارات استعمال کیے جا رہے ہیں، اور عدالت اس پالیسی معاملات میں مداخلت نہیں کر سکتی۔

سندھ ہائی کورٹ کا کہنا تھا کہ مساجد میں عبادات کے سلسلے میں صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے علما کا اجلاس بھی طلب کر رکھا ہے، علما کرام کے فتوؤں کی روشنی میں وبا کی وجہ سے عبادات محدود کی جا سکتی ہیں۔

کوشش ہےکہ رمضان میں مساجدکی رونقیں بحال ہوں، نور الحق قادری

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ 18 اپریل کو صدر مملکت کی زیر صدارت مختلف مکاتب فکر کے علما کا اجلاس ہے، جس میں مساجد میں نماز اور رمضان سے متعلق پالیسی وضع کی جائے گی۔

ایڈیشنل اے جی سندھ جواد ڈیرو نے عدالت کے روبرو پیش ہوتے ہوئے کہا کہ مساجد کو بند نہیں کیا گیا صرف محدود کیا گیا ہے، دنیا بھر میں 20 ملین افراد کرونا وائرس سے متاثر ہو چکے ہیں، پاکستان میں بھی وائرس پھیل رہا ہے، یہ اقدام عوام کو وائرس سے محفوظ رکھنے کے لیے اٹھایا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں