The news is by your side.

Advertisement

کووڈ 19 کے ماخذ کا سراغ کیسے لگائیں ؟ ماہر صحت نے بڑا دعویٰ کردیا

ماپوتو: دنیا بھر کے سائنسدان عالمی وبا کرونا وائرس کا ماخذ جاننے کے لئے سرگرم عمل ہے، ایسے میں افریقی ملک کے ماہر صحت نے بڑا مطالبہ کردیا ہے۔

موزمبیق کے قومی صحت انسٹی ٹیوٹ کے ڈپٹی ڈائریکٹر ایڈورڈو سامو گوڈو کا کہنا ہے کہ نوول کرونا وائرس کے ماخذ کا سراغ لگانے کے لئے دنیا کے مختلف حصوں کی لیبارٹریوں میں گزشتہ تین یا چار برسوں سے ذخیرہ شدہ نمونوں پر تحقیقات ہونی چاہئے اوراس میں جانورو ں سے حاصل کئے گئے نمونے بھی شامل ہونے چاہیئے۔

ماہر صحت نے خبردار کیا کہ اگر اس عمل کو سیاست بازی کے خطرے سے دوچار کیا جائے تو سچ تک کبھی بھی رسائی حاصل نہیں ہوسکتی، اس معاملے پر سیاست بازی نہ کی جائے، ماخذ کے بارے میں تحقیقات ایک سائنسی عمل ہے یہ کوئی سیاسی معاملہ نہیں ہے۔

گوڈو کہتے ہیں کہ جب سائنس کو سیاست بازی کی نذر کیا جاتا ہے تو ہم تمام سائنسی مواد اور بصیرت کھو دیتے ہیں اور سائنسی دلائل بھلا دیئے جاتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: کرونا کا پھیلاؤ: چین نے اقوام متحدہ سے بڑا مطالبہ کردیا

گوڈو نے واضح کیا کہ بہت سی مثالیں موجود ہیں جہاں ایک ملک میں پہلا کیس پایا گیا تھا لیکن یہ زونوٹک عمل (جب وائرس جانوروں کی انواع سے انسان میں منتقل ہوتا ہے) دوسرے ملک میں ہوا جو کہ فطری بات ہے۔

یاد رہے کہ کرونا وبا کے آغاز سے ہی چین اور امریکا کے درمیان سرد مہری جاری ہے، امریکا کئی مواقع پر برملا اظہار کرچکا ہے کہ چین کے شہر ووہان کی لیبارٹری سے ممکنہ طور پر یہ وائرس پھیلا ہے۔

دوسری جانب سینئر چینی سفارت کار کا کہنا ہے کہ کووڈ نائنٹین کے ماخذ کی کھوج کی شفاف تحقیقات کے لئے امریکا میں فورٹ ڈیٹریک اور یونیورسٹی آف نارتھ کیرولائنا کی لیبارٹریوں تک مکمل رسائی ہونی چاہئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں