The news is by your side.

Advertisement

مقبوضہ کشمیر میں کشمیری 3 ماہ سے نماز جمعہ سے محروم

سرینگر: مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری کیشدگی کو تین ماہ ہوگئے۔ کشمیری تین ماہ سے زائد عرصے سے نماز جمعہ کی ادائیگی سے محروم ہیں۔ حریت کانفرنس کی اپیل پر آج احتجاجی ریلیاں نکالی جائیں گی۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں جاری کشیدگی کو 3 ماہ سے زائد ہوگئے۔وادی میں حالات بدستور کشیدہ ہیں اور معمول کی زندگی مفلوج ہے۔

بھارتی فورسز کی جانب سے سرچ آپریشن کے بہانے چادر اور چار دیواری کا تقدس پامال کیا جا رہا ہے۔ مقبوضہ کشمیر کی بھارت نواز کٹھ پتلی انتظامیہ نے آزادی مارچ میں شرکت پر درجنوں سرکاری ملازمین کو برطرف کردیا۔

حریت کانفرنس کی اپیل پر آج نام نہاد اسمبلی کے ارکان کے گھر کی جانب مارچ کیا جائے گا اور دھرنا دیا جائے گا۔

بھارت کشمیر میں جاری ظلم و بربریت کو فوری بند کرے، او آئی سی *

مقبوضہ کشمیر میں 3 ماہ سے زائد عرصے میں 9 ہزار سے زائد کشمیریوں کو گرفتار کیا جا چکا ہے جبکہ 100 سے زائد کشمیری شہید ہوچکے ہیں۔

دوسری جانب اسیر کشمیری رہنما یاسین ملک کی طبیعت خراب ہونے کے باوجود انہیں اسپتال میں داخل نہیں کیا گیا۔ کشمیری رہنماؤں نے یاسین ملک کی حالت پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے انہیں اسپتال منتقل کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

حریت رہنما یاسین ملک کی اہلیہ مشعال ملک نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت روکنے اور حریت قائدین کی فوری رہائی ممکن بنانے کے لیے روسی صدر ولادی میر پیوٹن کو خط بھی لکھا ہے اور ان سے مدد کی اپیل کی ہے۔

واضح رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم کے باعث اب تک 100 افراد شہید اور 15 ہزار سے زائد زخمی ہو چکے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں