ماڈل ایان علی کسٹم انسپکٹر کے قتل کیس میں ملزمہ نامزد -
The news is by your side.

Advertisement

ماڈل ایان علی کسٹم انسپکٹر کے قتل کیس میں ملزمہ نامزد

راولپنڈی : ماڈل ایان علی کی ابھی کرنسی اسمگلنگ کیس سے مکمل طور پر جان بھی نہ چھڑا سکی تھیں کہ انہیں کسٹم انسپکٹر اعجاز چوہدری کے قتل کیس میں ملزمہ نامزد کردیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق راولپنڈی عدالت میں مجسٹریٹ گلفام لطیف بٹ نے کسٹم انسپکٹر اعجاز چودھری قتل کیس میں ایان علی کی بیان ریکارڈ کرانے کی درخواست پر سماعت کی، ملزمہ ایان علی عدالت میں پیش ہوئیں،  کسٹم عدالت میں مقدمے کی سماعت شروع ہوئی تو تفتیشی افسر کیجانب سے ایان علی کے مجسٹریٹ کی عدالت میں بیان ریکارڈ کرنیکی درخواست کی گئی تاہم مجسٹریٹ نے ملزمہ کا بیان ریکارڈ کرنے سے انکار کر دیا، اس معاملے پر تفتیشی افسر کا کہنا تھا کہ مقدمے کی تفتیش اب سی ٹی ڈی کر رہی ہے۔


 مزید پڑھیں : کسٹم انسپکٹر کو قتل نہیں کرایا، ایان علی


تفتیشی افسر نے عدالت میں بیان دیتے ہوئے کہا کہ اعجاز چودھری کے قتل کے مقدمے میں جی آئی ٹی تشکیل دیدی گئی ہے، ایان علی ایک باربھی شامل تفتیش ہونے نہیں آئیں۔

عدالت نے انسداد دہشتگردی ایکٹ کی دفعات شامل ہونے کے باعث ماڈل گرل کو انسداد دہشتگردی عدالت سے رجوع کرنے کا حکم دے دیا، اس حوالے سے قانونی ماہرین کاکہناہےکہ شامل تفتیش ہونے سے قبل ایان علی کو ضمانت کروانی ہوگی

دوسری جانب ایان علی کا کہنا ہے کہ انہیں اعجازچودھری کےقتل میں ناحق پھنسایا جارہا ہے، انکا اس کیس سے کوئی تعلق نہیں۔


 مزید پڑھیں: ایان علی کو بیرونِ ملک جانے کی اجازت نہ دی جائے . اہلیہ مقتول انسپکٹر


یاد رہے کہ گذشتہ روز بھی کرنسی اسمگلنگ کیس کی سماعت کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ کسٹم انسپکٹر اعجاز جب قتل ہوئے تو میں جیل میں تھی میں نے کسی کو قتل نہی کروایا، کسٹم اسپکٹر اعجاز کے قتل سے متعلق اپنا تحریری بیان تھانہ وارث خان پولیس کو بذریعہ عدالت بھجوادیا ہے۔

واضح رہے کہ  مقتول انسپکٹر اعجاز چوہدری کی اہلیہ نے روالپنڈی کی عدالت میں درخواست دائر کی ہے، جس میں مؤقف اختیار کیا گیا ہے کہ ملزمہ کسٹم انسپکٹر کے قتل میں ملوث ہے اگر ایان علی کو بیرون ملک جانے کی اجازت دے دی گئی تو اُن کو انصاف نہیں مل سکے گا۔

 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں