The news is by your side.

Advertisement

توہین عدالت کیس میں دانیال عزیزنااہل قرار

اسلام آباد: مسلم لیگ ن کے رہنما دانیال عزیز کو توہین عدالت کا مرتکب قرار دے دیا گیا ہے جس کے بعد وہ آرٹیکل 63 کے تحت نااہل ہوگئے۔ دانیال عزیز اگلے 5 سال تک الیکشن میں حصہ نہیں لے سکیں گے۔

تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن کے رہنما اور سابق وزیر برائے نجکاری دانیال عزیز کے خلاف توہین عدالت کیس کا فیصلہ سپریم کورٹ کے جج جسٹس گلزار کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے سنایا۔ عدالت نے انہیں مجرم قرار دیتے ہوئے عدالت برخواست ہونے تک کی سزا سنائی۔

فیصلے کے مطابق دانیال عزیز عدالت اور ججز کی تضحیک کے مرتکب ہوئے اور انہوں نے انصاف کی فراہمی کے عمل میں مداخلت کی۔

دانیال عزیز کی عدلیہ کے خلاف توہین آمیز تقاریر پر 2 فروری کوسپریم کورٹ نے از خود نوٹس لیا تھا۔

کیس کی سماعت کے دوران دانیال عزیز کے وکیل علی رضا نے دلائل دیتے ہوئے مؤقف اختیار کیا تھا کہ دانیال عزیز نے تضحیک آمیز بیان نہیں دیا، نجی ٹی وی نے پرائیوٹ تقریب کی ویڈیو نشر کی ہے۔

جسٹس عظمت سعید نے ریمارکس دیے تھے کہ نجی ٹی وی پر چلنے والی ویڈیو کے نکات کی تردید نہیں کی گئی۔ اس موقع پر وکیل نے منطق پیش کی کہ نجی ٹی وی کے بیان کی ٹرانسکرپٹ کو دانیال عزیز نے تسلیم نہیں کیا، دانیال عزیز نے عدالتی فیصلوں پر فقط تنقید کی ہے۔

فردِ جرم


فرد جرم عائد کرتے ہوئے جسٹس مشیر عالم نے چارج شیٹ پڑھ کر سنائی تھی جس کے مطابق ’دانیال عزیز نے جج کی تضحیک اورعدالت کی توہین کی۔ انہوں نے 8 ستمبر کو کہا کہ نگران جج نے نیب لاہور کو طلب کر کے تیار کیا‘۔

چارج شیٹ کے مطابق دانیال عزیز نے کہا کہ ’جہانگیر ترین کو سزا دے کر عمران خان کو بچایا گیا تھا یہ سب اسکرپٹ کے مطابق کیا گیا جبکہ 31 دسمبر کو دانیال عزیز نے کہا کہ جج کو بتانا ہوگا کیپٹل ایف زیڈ ای کی بات ان تک کیسے پہنچی، مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کو ایف زیڈ ای سے متعلق تحقیقات کا کہا گیا تھا‘۔

3 مئی کو جسٹس عظمت نے دلائل کے بعد فیصلہ محفوظ کرتے ہوئے کہا تھا کہ دانیال عزیز عدالت کے فیورٹ چائلڈ ہیں، ملزم عدلیہ کا ہمیشہ فیورٹ چائلڈ ہوتا ہے۔ صفائی کا موقع دیں گے۔

توہین عدالت کیس کے فیصلے کے بعد دانیال عزیز اگلے 5 سال کے لیے الیکشن میں حصہ لینے کے لیے نااہل ہوگئے ہیں۔

نہال ہاشمی کو سزا


یاد رہے کہ رواں سال فروری میں سپریم کورٹ نے دھمکی آمیز تقریراورتوہین عدالت کیس میں نہال ہاشمی کو 1 ماہ قید اور پچاس ہزار روپے جرمانے کی سزا سنائی تھی۔ عدالت نے نہال ہاشمی کو کسی بھی عوامی عہدے کے لیے 5 سال کے لیے نا اہل بھی قرار دیا تھا۔

دانیال عزیز کا سیاسی سفر


دانیال عزیز 25 فروری سنہ 1965 کو پیدا ہوئے ، ان کے والد سیاست داں تھے اور ایک مرتبہ وفاقی کابینہ کا حصہ بھی رہ چکے ہیں، ان کی والدہ امریکی نژاد ہیں۔

توہینِ عدالت کے مقدمے میں نااہل قرار دیے جانے والے دانیا ل عزیز نے اپنا سیاسی سفر قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 91 ناروال سے بطور آزاد امیدوار 1997 میں شروع کیا تھا۔

سنہ 2002 میں ہونے والے انتخابات میں وہ ایک بار پھر ناروال سے بطور آزاد امید وار کامیاب ہوئے اور بعد میں انہوں نے پاکستان مسلم لیگ ق میں شمولیت اختیار کی۔ اس سے قبل وہ نیشنل ری کنسٹرکشن بیورو کے چیئر مین بھی رہے تھے۔

سنہ 2008 کے انتخابات میں انہوں نے این اے 116 ناروال سے مسلم لیگ ق کے ٹکٹ پر الیکشن میں حصہ لیا تاہم فتح یاب نہ ہوسکے، مارچ 2013 میں انہوں نے پاکستان مسلم لیگ ن میں شمولیت اختیار کی اور سنہ 2013 کے عام انتخابات میں این اے 116 ناروال سے قومی اسمبلی کے ممبر منتخب ہوئے۔

سنہ 2017 میں سابق وزیراعظم نواز شریف کی نا اہلی کے بعد شاہد خاقان عباسی وزیراعظم منتخب ہوئے تودانیال عزیز وفاقی وزیر برائے نجکاری مقرر کیا گیا۔ 31 مئی کو جب حکومت کی مدت ختم ہوئی تو دانیال عزیز کا عہدہ بھی ختم ہوگیا اور آج سپریم کورٹ نے انہیں توہینِ عدالت کے جرم میں پانچ سال کے لیے نا اہل قرار دے دیا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں