The news is by your side.

Advertisement

آئی پی ایل : ڈیرن سیمی بھارتی کھلاڑیوں کی بدسلوکی پر برہم

پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) میں مقبول ترین غیر ملکی کھلاڑی اور سابق ویسٹ انڈین کپتان ڈیرن سیمی نے کہا ہے کہ جب وہ آئی پی ایل میں حیدر آباد سن رائزرز ٹیم کا حصہ تھے تو انہیں کالو کہہ کر پکارا جاتا تھا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ انسٹا گرام  پر اپنے جذبات کا اظہار کرتے ہوئے ڈیرن سیمی نے انڈین پریمئیر لیگ (آئی پی ایل) میں نسل پرستانہ جملے سننے سے متعلق انکشاف کرتے ہوئے سن رائزرس حیدرآباد کے کھلاڑیوں پر بدسلوکی کا الزام عائد کیا۔

اپنے سوشل میڈیا پیغام میں انہوں نے خود کو کالو کہنے پر شدید غصے کا اظہار کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ان کے ساتھ ساتھ سری لنکن آل راؤنڈر تھیسارا پریرا کو بھی ان ہی الفاظ سے پکارا جاتا تھا۔

پشاور زلمی کے سابق کپتان نے کہا کہ پہلے انہیں لگتا تھا کہ کالو کا مطلب طاقتور ہوتا ہے، تاہم بعد میں اس لفظ کے اصل معنی معلوم ہوئے۔

سال 2014 کے ایڈیشن میں ڈیرن سیمی نے آئی پی ایل میں سن رائزرز حیدرآباد کی نمائندگی کی تھی جہاں ان کی ٹیم پلے آف مرحلے میں پہنچے میں بھی ناکام رہی تھی۔

دوسری جانب بھارتی کرکٹر عرفان پٹھان بھی نسلی تعصب کے خلاف میدان میں آگئے، ان کا کہنا تھا کہ خاص مذہب کی وجہ سے کسی جگہ گھر نہ خرید سکنا بھی نسلی تعصب ہے۔

واضح رہے کہ ڈیرن سیمی نے یہ معاملہ ایسے وقت میں اٹھایا ہے جب امریکا میں سیاہ فام جارج فلائیڈ کی سفید فام امریکی پولیس اہلکار کے ہاتھوں قتل کے خلاف بلیک لائیوز میٹر (سیاہ فام لوگوں کی زندگی کی اہمیت ہے) مہم جاری ہے اور اس مہم کی حمایت میں اور جارج فلائیڈ کے قتل کے خلاف ڈیرن سیمی بھی سوشل میڈیا پر اپنے پیغام کا اظہار کر چکے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں