The news is by your side.

Advertisement

ماضی کی معروف اداکارہ سلونی کی برسی

27 نومبر 1964ء میں ‘غدار’ بڑے پردے پر نمائش کے لیے پیش کی گئی اور فلم کے ساتھ ہی سلونی کا انڈسٹری اور شائقینِ سنیما سے تعارف ہوا۔ 1970ء میں سلونی کے مداحوں کو اخبارات کے ذریعے معلوم ہوا کہ انھوں نے خودکشی کی کوشش کی تھی، مگر ڈاکٹروں نے موت کے منہ میں جانے سے بچا لیا ہے۔

اداکارہ سلونی کو اپنے دور کے مشہور فلم ساز اور ہدایت کار باری ملک سے محبّت ہوگئی تھی اور عشق میں ناکامی پر دلبرداشتہ ہوکر انھوں نے اپنی جان لینے کی کوشش کی تھی۔ باری ملک نے اس واقعے کے بعد سلونی سے شادی کرلی اور کاروبار کے سلسلے میں 25 برس متحدہ عرب امارات میں اپنی اہلیہ سلونی کے ساتھ گزارے۔

پاکستانی فلمی صنعت کی معروف اداکارہ سلونی نے 15 اکتوبر 2010ء کو یہ دنیا چھوڑ دی۔ آج ماضی کی اس اداکارہ کی برسی ہے۔

1943ء میں راولپنڈی میں پیدا ہونے والی اداکارہ نے فلم نگری میں‌ خود کو سلونی کے نام سے متعارف کروایا۔ انھیں مشہور فلم ساز فضل احمد کریم فضلی نے اپنی فلم میں سائڈ رول کے لیے منتخب کیا تھا، لیکن اس فلم کی ریلیز سے قبل 1964ء میں اداکارہ سلونی کی ایک اور فلم ’’غدار‘‘ سنیما کے پردے پر سج گئی اور یوں یہی فلم اس اداکارہ کا شائقین سے پہلا تعارف ثابت ہوئی۔

سلونی نے اپنے فلمی کیریئر میں 67 فلموں میں اداکاری کے جوہر دکھائے جن میں 36 اردو اور 31 فلمیں تھیں۔ اداکارہ کی مقبول فلموں میں کھوٹا پیسا، عادل، باغی سردار، حاتم طائی، درندہ، چن مکھناں، دل دا جانی، لٹ دا مال، بالم، چھین لے آزادی سرفہرست ہیں۔

فلم انڈسٹری کی سلونی نے کراچی میں‌ اپنی زندگی کا سفر تمام کیا۔ وہ یہاں اپنی ایک صاحبزادی کے ہاں مقیم تھیں اور علالت کے سبب ایک اسپتال میں زیرِ علاج تھیں۔ ان کا جسدِ خاکی لاہور لے جایا گیا اور وہیں‌ ان کی تدفین کی گئی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں