The news is by your side.

Advertisement

تحریکِ آزادی کے عظیم راہ نما اور قائدِ اعظم کے رفیقِ خاص سردار عبدالرّب نشتر کا یومِ وفات

سردار عبدالرّب نشتر کا شمار مسلمانانِ ہند کے ان راہ نماؤں میں‌ ہوتا ہے جنھوں نے اپنے فہم و فراست اور سیاسی سوجھ بوجھ سے آزادی کی تحریک میں‌ اہم اور نمایاں کردار ادا کیا۔ آج اس مدبّر اور مسلمانوں‌ کے عظیم راہ نما کا یومِ وفات ہے۔

سردار عبدالرّب نشتر مسلمانوں کا درد رکھنے والے ایک ایسے راہ نما تھے جنھیں قائدِ اعظم کی رفاقت اور ان کے قابلِ اعتماد ساتھی ہونے کا شرف حاصل ہوا۔ قیامِ پاکستان کے بعد وہ پاکستان کی پہلی کابینہ کا حصّہ بنے اور پنجاب کے گورنر رہے۔ زندگی کے آخری ایام میں وہ مسلم لیگ کی صدارت کررہے تھے۔

سردار عبدالرب نشتر نے اپنے سیاسی سفر کے آغاز پر ہی جان لیا تھا کہ ہندو، مسلمانوں کے ساتھ تعصب ختم نہیں کرسکتے، یہی وجہ ہے کہ انھوں‌ نے آل انڈیا مسلم لیگ میں شمولیت اختیار کی اور جدوجہدِ آزادی میں‌ عملی طور پر حصّہ لینے لگے۔

سردار عبدالرّب نشتر 13 جون 1899ء کو پشاور میں پیدا ہوئے تھے۔ انہوں نے پنجاب یونیورسٹی سے گریجویشن کیا اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ایل ایل بی کی ڈگری حاصل کی۔ ان کی سیاسی زندگی کا آغاز انڈین نیشنل کانگریس سے ہوا، مگر ہندوؤں کے عزائم اور مسلمانوں‌ سے ان کے تعصب کو دیکھتے ہوئے آل انڈیا مسلم لیگ کے پلیٹ فارم سے فعال ہوگئے۔ وہ اہم سیاسی تحریکوں اور فیصلوں کے دوران اپنے مؤقف کا بے لاگ اظہار کرتے رہے۔ 1946ء میں متحدہ ہندوستان کی عارضی حکومت میں انھوں نے وزارتِ مواصلات کی ذمہ داریاں سنبھالیں۔ قیام پاکستان کے بعد نئی مملکت کو اپنے پیروں پر کھڑا کرنے کے لیے دیگر اکابرین اور راہ نماؤں کے ساتھ مل کر ذمہ داریاں‌ نبھائیں۔

14 فروری 1958ء کو تحریکِ پاکستان کے اس عظیم راہ نما نے کراچی میں وفات پائی۔ سردار عبدالرّب نشتر قائدِ اعظم اور لیاقت علی خان کے مزارات کے نزدیک احاطے میں‌ مدفون ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں