The news is by your side.

Advertisement

پشاور میں آکسیجن کی کمی سے اموات، تحقیقاتی رپورٹ سامنے آگئی

پشاور: صوبہ خیبرپختونخوا میں آکسیجن کی کمی سے اموات پر تحقیقاتی رپورٹ سامنے آگئی۔

اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق خیبرٹیچنگ اسپتال آکسیجن بروقت نہ ملنے پر 7 مریضوں کی اموات کی تحقیقاتی رپورٹ سامنے آگئی۔

تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق 5 دسمبر کو رات 12 بجکر 40 منٹ پر اوٹی سے آکسیجن میں کمی سے متعلق کال ریسیو ہوئی، وحید نامی شخص ڈیوٹی پر موجود تھا لیکن کسی نے فون ریسیو نہیں کیا، آکسیجن روم میں کوئی بھی موجود نہیں تھا۔

رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ آکسیجن پلانٹ کے سپروائزر نعمت نے بتایا کہ آکسیجن ٹینک خالی ہے، نعمت خان کے مطابق ڈی جی ہیلتھ کے دیے گئے 100 آکسیجن سلنڈر موجود ہیں۔

آکسیجن کی ترسیل کرنے والی گاڑی رات 3 بجکر 15 منٹ پر اسپتال پہنچی جبکہ کچھ مریضوں کو ان کے رشتے دار دوسرے اسپتال لے گئے تھے۔

واضح رہے کہ ترجمان خیبر ٹیچنگ اسپتال نے بتایا کہ سردی میں مریضوں کو آکسیجن کی زیادہ ضرورت ہوتی ہے، تاہم آکسیجن ختم ہونے پر سنٹرل آکسیجن سے سپلائی تین گھنٹے تاخیر سے پہنچی تھی۔

ترجمان کے مطابق اسپتال کے مختلف وارڈز میں تشویش ناک حالت میں مریض شدید مشکلات کا شکار رہے، اور بروقت آکسیجن نہ ملنے کے باعث کورونا وارڈ، آئی سی یو اور میڈیکل وارڈ میں تشویشناک حالت میں زیرعلاج 7 مریض دم توڑ گئے۔

دوسری جانب وزیراعلیٰ خیبرپختون خوا محمود خان نے خیبر ٹیچنگ اسپتال میں آکسیجن کی کمی سے مریضوں کی اموات کے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے چیف سیکرٹری اور وزیر صحت کو اسپتال کے بورڈ آف گورنرز سے واقعے کی تحقیقات کروانے کی ہدایت کی تھی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں