اسپاٹ فکسنگ کیس، شاہ زیب کی درخواست پر فیصلہ محفوظ، 10 اگست کو سنایا جائے گا
The news is by your side.

Advertisement

اسپاٹ فکسنگ کیس، شاہ زیب کی درخواست پر فیصلہ محفوظ، 10 اگست کو سنایا جائے گا

کراچی: اسپاٹ فکسنگ کیس میں معطل پاکستانی بلے باز شاہ زیب حسن کی درخواست پر فیصلہ محفوظ ہوگیا جو 10 اگست کو سنایا جائے گا جبکہ کرکٹر ناصر جمشید نے اینٹی کرپشن ٹریبونل میں جواب جمع کرادیا۔

تفصیلات کے مطابق قومی ٹیسٹ کرکٹ ٹیم کے معطل کھلاڑی ناصر جمشید کے اسپاٹ فکسنگ کیس کی سماعت پاکستان کرکٹ بورڈ اینٹی کرپشن ٹریبونل میں ہوئی۔

ناصر جمشید نے عدالت کا آگاہ کیا کہ میں بلّوں کی خرید و فروخت کا کاروبار کرتا ہوں بس اسی وجہ سے دیگر کھلاڑیوں سے روابط بڑھ گئے تھے۔

مزید پڑھیں: اسپاٹ فکسنگ کیس، کرکٹرناصرجمشید پرایک سال کی پابندی عائد

پاکستان کرکٹ بورڈ کے قانونی مشیر تفضل رضوی کا کہنا تھا کہ ناصر جمشید نے اسکائپ کے ذریعے ٹریبونل میں اپنا بیان ریکارڈ کرایا اور وہ  اپنے کاروبار کی کوئی دستاویزات پیش نہ کرسکے۔

ٹربیونل نے ناصر جمشید کیس کی سماعت 6 اگست تک ملتوی کردی، آئندہ ہونے والی سماعت پر وکیل کو حتمی دلائل پیش کرنے کی ہدایت بھی جاری کی گئی ہے۔

دوسری جانب پاکستانی بلے باز شاہ زیب حسن کی جانب سے دائر کی گئی اپیل پر ٹریبونل نے فیصلہ محفوظ کرلیا جو 10 اگست کو سنایا جائے گا۔

قبل ازیں گزشتہ روز کیس کی سماعت ہوئی تھی جس کے دوران ناصر جمشید کے وکلا پیش نہیں ہوسکے تھے تو ٹریبونل نے آدھا گھنٹہ انتظار کے بعد جمعے کو ہر صورت پیش ہونے کا حکم دیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: اسپاٹ فکسنگ : خالد لطیف اور شاہ زیب حسن کو دوبارہ طلب کر لیا گیا

واضح رہے کہ پاکستان سپر لیگ کے دوسرے سیزن میں اسپاٹ فکسنگ کا اسکینڈل سامنے آیا تھا جس میں ناصر جمشید، شرجیل خان، محمد عرفان اور خالد لطیف کو قصور وار قرار دیا گیا تھا۔

اینٹی کرپشن ٹریبونل نے اسپاٹ فکسنگ کی تحقیقات کیں جس کے بعد محمد عرفان کو کھیلنے کی اجازت ملی جبکہ 11 دسمبر 2017 کوکیس کا فیصلہ سناتے ہوئے ناصر جمشید پر ایک سال کرکٹ کھیلنے پر پابندی عائد کی تھی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں