16 پائلٹس اور65کیبن کریوکی ڈگریاں جعلی نکلیں،سی اےاے کا انکشاف
The news is by your side.

Advertisement

16 پائلٹس اور 65 کیبن کریوکی ڈگریاں جعلی نکلیں،سی اےاے کا انکشاف

اسلام آباد : سول ایوی ایشن نے انکشاف کیا سولہ پائلٹس اور پینسٹھ کیبن کریو کی ڈگریاں جعلی نکلیں، اُن سب کے لائسنس معطل کردیئے، چھ کے سوا تمام ڈگریوں کی تصدیق ہوگئی ہے،  چیف جسٹس نے کہا جن سرٹیفکیٹس کی بنیاد پر معطل کیاگیا وہ ریکارڈ درست ہونا چاہیے، ہم کسی کے رزق پر قدغن نہیں لگانا چاہتے۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں 3رکنی بینچ نے پائلٹس اور کیبن کریوکی ڈگریوں سے متعلق کیس کی سماعت کی، وکیل سول ایوی ایشن اتھارٹی نے جواب جمع کرایا، جس میں بتایا گیا سولہ پائلٹس اور پینسٹھ کیبن کریو کی ڈگریاں جعلی نکلیں تھیں، ان سب کے لائسنس معطل کردیے، صرف چھ ڈگریوں کی تصدیق رہتی ہے وہ لوگ بیرون ملک ہیں۔

چیف جسٹس نے حکم دیا جن سرٹیفکیٹ کی بنیاد پر معطل کیاگیا وہ ریکارڈ درست ہونا چاہیے، ایسا تاثر ہے عدالتی حکم پر عجلت کا مظاہرہ کیا جارہا ہے، ہم کسی کے رزق پر قدغن نہیں لگانا چاہتے۔

دوران سماعت ایک متاثرہ پائلٹ نے بتایا اس کی ڈگری اصل ہے مگر پھر بھی لائسنس معطل کردیاگیا، جس پر چیف جسٹس نے کہا جس کا مسئلہ ہے وہ متعلقہ فورم سے رجوع کرے۔

سول ایوی ایشن کے جواب پر سپریم کورٹ نے کیس نمٹادیا۔

پی آئی اے اور دیگرایئر لائنز میں پائلٹس کی جعلی ڈگری کیس کی گذشتہ سماعت کے دوران جسٹس اعجاز الحسن نے ریمارکس دیے تھے کہ میٹرک سے کم تو بس نہیں چلا سکتا یہاں جہاز اڑائے جا رہے ہیں۔

مزید پڑھیں : پائلٹس جعلی ڈگری کیس:عدالت کا ڈگریوں کی تصدیق کاعمل مکمل کرکے رپورٹ جمع کرانے کا حکم

سول ایوی ایشن کی جانب سے عبوری رپورٹ پیش کی گئی تھی ، جس میں بتایا گیا کہ7پائلٹس کی ڈگریاں جعلی پائی گئیں، 5 میٹرک انڈرمیٹرک ہیں، پائلٹس، کیبن کریو کی 4321 ڈگریوں کی تصدیق کا عمل مکمل کیا گیا، 438 ڈگریوں کی تصدیق کاعمل جاری ہے۔

اس سے قبل 25 دسمبر کو سپریم کورٹ لاہوررجسٹری میں پائلٹس کی جعلی ڈگری کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے 28 دسمبرتک تمام افراد کی اسناد کی تصدیق کا حکم دیتے ہوئے ریمارکس دیے تھے کہ جو واضح اور صاف ڈگریاں فراہم نہ کرے اسے فارغ کر دیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں