The news is by your side.

Advertisement

تیزاب کی کھلےعام فروخت پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ

کوئٹہ: بلوچستان اسمبلی میں خواتین اور بچوں پر تیزاب پھینکنے سے متعلق ایک قرارداد منظور کر لی گئی ہے جس میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ تیزاب کی کھلےعام فروخت پر پابندی عائد کی جائے۔

تفصیلات کے مطابق بلوچستان اسمبلی میں خواتین اور بچوں پر تیزاب پھینکنے کے مسئلے کے پیش نظر قرارداد رکن بلوچستان اسمبلی شکیلہ نوید دہوار نے پیش کی۔

قرارداد کے متن کے مطابق کوئٹہ میں تیزاب گردی کے واقعات رونما ہوئے ہیں، تیزاب گردی سے خواتین اور بچیوں میں خوف و ہراس پایا جاتا ہے، حکومت واقعات میں ملوث افراد کو گرفتار کر کے کیفر کردار تک پہنچائے۔

قرارداد میں یہ بھی کہا گیا کہ تیزاب کی کھلےعام فروخت پر پابندی عائد کی جائے۔

یہ بھی پڑھیں:  تیزاب گردی قتل سے بڑا جرم ہے اور سزا عمرقید ہے ،چیف جسٹس

ادھر بلوچستان اسمبلی اجلاس کے دوران رکن صوبائی اسمبلی قادر نائل نے کہا حکومت ایران سے آنے والے زائرین کی سیکیورٹی کو فول پروف بنائے۔ انھوں نے محکمہ تعلیم میں ہونے والی بھرتیوں میں بدعنوانیاں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے قبیلے سے ایک شخص بھی کلاس فور کی پوسٹوں پر نہیں آیا۔

دریں اثنا، بلوچستان اسمبلی اجلاس میں تاپی گیس پائپ لائن سے متعلق مشترکہ قرارداد منظور کی گئی، جس میں کہا گیا کہ پائپ لائن منصوبے میں آنے والے جنگلات کو کاٹا جائے گا، جس سے 100 گاؤں متاثر ہوں گے، اور درختوں کی کٹائی کے باعث ماحولیات پر اثرات پڑیں گے، اس لیے کٹائی کو روکا جائے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں