The news is by your side.

Advertisement

کرونا وائرس : عالمی ادارہ صحت نے نئی دوا کی توثیق کردی

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے کوویڈ 19کے تشویشناک مریضوں کی جان بچانے کے حوالے سے ڈیکسا میتھاسون نامی دوا کے نتائج کاخیر مقدم کرتے ہوئے اسے خوش آئند قرار دیا ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے مطابق یہ آکسیجن یا وینٹی لیٹر کی ضرورت والے کوویڈ 19 کے انتہائی پیچیدہ مریضوں کی شرح اموات کو کم کرنے کے سلسلے میں سود مند ثابت ہوگی۔

گزشتہ ماہ جون میں برطانوی ماہرین نے دریافت کیا تھا کہ ڈیکسامیتھاسون نامی دوا نئے کورونا وائرس کوویڈ 19کے تشویشناک مریضوں کی زندگیاں بچانے میں مددگار ثابت ہوسکتی ہے۔

اب نئے طبی ٹرائلز میں بھی تصدیق کی گئی ہے کہ سستی اور آسانی سے دستیاب اسٹرایئڈ ادویات کووڈ 19 کے قریب المرگ مریضوں کی زندگیاں بچانے میں مدد دے سکتی ہیں۔

اس تصدیق کے بعد اب عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے اعلان کیا ہے کہ وہ ڈاکٹروں کو ان ادویات کے استعمال کا پر زور مشورہ دے رہا ہے تاکہ شدید یا سنگین حد تک بیمار افراد اس بیماری کا باآسانی مقابلہ کرسکیں۔

عالمی ادارہ صحت کے زیرتحت ہونے والے ٹرائلز میں یہ نئے شواہد سامنے آئے ہیں جن کا تجزیہ 3 تحقیقی رپورٹس میں کیا گیا جبکہ 4 کنٹروئل ٹرائلز بھی اس عمل کا حصہ تھے۔

عالمی ادار صحت کے مطابق یہ ادویات جن کو کورٹیکواسٹرایئڈز کے نام سے جانا جاتا ہے، قریب المرگ مریضوں کی موت کا خطرہ بیس فیصد تک کم کردیتی ہیں۔

مجموعی طور پر اموات کا خطرہ ایک تہائی حد تک کم کیا جاسکتا ہے اور یہ بھی دریافت کیا گیا کہ ایک اور اسٹرایئڈ ہائیڈروکورٹیسون ڈیکسامیتھاسون کے مقابلے میں زیادہ مددگار ہے۔

عالمی ادارہ صحت کے اس میٹا اینالائسز میں شامل اور برطانیہ کی برسٹل یونیورسٹی کے مار جوناتھن اسٹیرن نے بتایا کورٹیکواسٹرایئڈز فی الحال واحد علاج ہے جو کووڈ 19 کے مریضوں میں اموات کی خطرہ کم کرسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ان نتائج سے ان شواہد کو تقویت ملتی ہے کہ ڈاکٹروں کو کوویڈ 19 کے بہت زیادہ بیمار افراد کا علاج ان ادویات سے کرنا چاہیے۔

یاد رہے کہ برطانیہ میں آکسفورڈ یونیورسٹی کے محققین نے اعلان کیا تھا کہ کوویڈ 19 کے پیچیدہ مریضوں کو جو وینٹی لیٹر پر ہیں یا جنہیں آکسیجن دی جارہی ہے، ڈیکسامیتھاسون نامی سٹیرؤڈ دینے سے شرح اموات میں 35 فیصد تک کی کمی دیکھی گئی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں