The news is by your side.

Advertisement

ساہیوال اسپتال میں پانچ نہیں تین بچے جاں بحق ہوئے، ترجمان وزارت صحت پنجاب

لاہور : وزارت صحت پنجاب نے وضاحت کی ہے کہ ساہیوال اسپتال کے چلڈرن وارڈ میں صرف تین بچے جاں بحق ہوئے، ایئر کنڈیشنر کے بند ہونے اور انتظامیہ کی مبینہ غفلت سے پانچ بچوں کی ہلاکت کی اطلاع بے بنیاد ہے۔

تفصیلات کے مطابق ساہیوال کے ڈی ایچ کیو  اسپتال کے چلڈرن وارڈ میں بچوں کی ہلاکت کا معاملہ پر وزارت صحت پنجاب نے پانچ بچوں کے جاں بحق ہونے کی تردید کردی۔

اس حوالے سے ترجمان وزارت صحت کے مطابق ڈسٹرکٹ اسپتال میں چلڈرن وارڈ کے ایئرکنڈیشنر کے بند ہونے اور انتظامیہ کی مبینہ غفلت سے پانچ بچوں کی ہلاکت کی اطلاع بے بنیاد ہے۔

میڈیا پر خبر نشر ہونے کے فوری بعد واقعے کی مکمل تحقیقات کیلئے ایڈیشنل سیکریٹری صحت کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیٹی ساہیوال بھیجی گئی۔ خصوصی تحقیقاتی کمیٹی نے مبینہ واقعے کی مکمل تحقیقات کر کے ابتدائی رپورٹ وزیرصحت ڈاکٹر یاسمین راشد کوپیش کردی۔

رپورٹ کے مطابق جاں بحق بچوں کی تعداد تین ہے، دو بچے نجی اسپتال سے انتہائی نازک حالت میں ساہیوال ڈسٹرکٹ اسپتال کی ایمرجنسی میں لائے گئےتھے۔ دونوں بچوں کی ہلاکت ایمرجنسی وارڈ جبکہ ایک نومولود بچے کی ہلاکت بچہ وارڈ میں ہوئی۔

جس کی حالت گزشتہ روز سے تشویشناک تھی۔ ایئرکنڈیشنر کے نہ چلنے سے ہلاکت کی خبر بے بنیاد ہے۔ واقعے کی مزید تحقیقات جاری ہے۔

مزید پڑھیں: ساہیوال کے سرکاری اسپتال میں مبینہ طور پر  24 گھنٹے میں 8 بچے جاں بحق

واضح رہے کہ ساہیوال کے ڈی ایچ کیو اسپتال میں ابتدائی اطلاع کے مطابق چوبیس گھنٹے میں مبینہ طور پر8 نومولود بچے جاں بحق ہوئے تھے۔

بعدا زاں وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے سیکرٹری صحت اور کمشنر ساہیوال ڈویژن سے رپورٹ طلب کی انہوں نے واقعے کی جامع تحقیقات کرکے مفصل رپورٹ پیش کرنے کا حکم جاری کیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں