The news is by your side.

Advertisement

مقبوضہ کشمیر میں قیمتی اور نایاب جانوروں کا غیر قانونی شکار

سری نگر : مقبوضہ کشمیر کے علاقے میں نامعلوم افراد ایک مادہ بارہ سنگھا کو ہلاک کرکے اس کے سینگ کاٹ کر لے گئے، جانور کی لاش ملنے پر لوگوں میں تشویش پائی جارہی ہے۔

جموں کشمیر کے دارالحکومت سری نگر کے مضافات میں قائم داچھی گام وائلڈ لائف سنکچری میں گزشتہ ماہ میں ایک مادہ بارہ سنگھا کی لاش پائی گئی تھی جسے مبینہ طور گولی مار کر ہلاک کیا گیا تھا۔

داچھی گام سنکچری میں گزشتہ ماہ سیرو تفریح کیلئے آنے والے چند مقامی افراد نے اس جانور کی لاش کو دیکھا اور اس کی تصویر بنالی تھی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق مادہ بارہ سنگھا کو مبینہ طور پر شکاریوں نے گولی مار کر ہلاک کیا تھا اور اس کی قیمتی سینگ کاٹ کر لے گئے تھے۔

اس حوالے سے داچھی گام وائلڈ لائف وارڈن الطاف حسین نے میڈیا کو بتایا کہ انہوں اس قیمتی اور نایاب جانور کی لاش کے نمونے تحقیقات کے لئے چنڈی گڑھ بھیج دیئے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ رپورٹ آنے کے بعد ہی اس بات کی تصدیق ہوگی کہ کیا واقعی اس بارہ سنگھا کی موت گولی لگنے سے ہوئی ہے یا اس کو جنگلی جانوروں نے ہلاک کیا ہے۔

اس واقعے سے مقامی لوگوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے کیونکہ کشمیر میں جنگلی جانوروں کے تحفظ فراہم کرنے کے لیے الگ سے قانون موجود ہیں تاہم رفتہ رفتہ بارہ سنگھاؤں کی تعداد میں کمی واقع ہوتی جارہی ہے اس  لیے اس پر مزید مستعد رہنے کی ضرورت ہے۔

واضح رہے کہ ایک تخمینے کے مطابق سال1990 میں بارہ سنگھاؤں کی تعداد 5 ہزار بتائی جاتی تھی تاہم اب ان کی تعداد گھٹ کر صرف 237 تک رہ گئی ہے جو کہ لمحہ فکریہ ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں