site
stats
صحت

مائیکرویو کا استعمال انسانی صحت کے لیے شدید نقصان دہ

کراچی: کیا آپ جانتے ہیں کہ باورچی خانے میں موجود مائیکرویو صحت کے لیے کس قدر نقصان دہ ہے؟

تفصیلات کے مطابق جدید سائنسی دور کے حساب سے انسان کی آسانی کے لیے نت نئی ایجادات سامنے آئیں جو ہماری روز مرہ کی زندگی کا حصہ بن چکی ہیں اُن میں سے ایک مائیکرو یو بھی ہے۔

حالیہ تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ مائیکرو ویو میں گرم کی جانے والے اشیاء کے استعمال سے قوتِ مدافعت کمزور ہوتی ہے اور اس سے کینسر کے مرض بھی لاحق ہوسکتا ہے۔

نیمرز میں شائع ہونے والی تحقیقاتی رپورٹ میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ مائیکرویو کے استعمال سےاشیاء میں بیکٹریا اور انفیکشن کے اثرات بڑھ جاتے ہیں جو انسانی صحت بالخصوص بچوں کو بری طرح متاثر کرتے ہیں۔

تحقیق میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ ہوم اپلائینز میں گرم کی جانے والے اشیاء اپنی غذائیت کے اثر کو کھو دیتی ہیں اور اسے انسانی صحت کے لیے مضر بنا دیتی ہیں، جس کی وجہ سے بلڈ پریشر اور شوگر کی بیماری کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ مائیکرویو غذا کو برقی مقناطیسی (الیکٹرک) شعاعوں کے ذریعے گرم کرتا ہے جو 2500 میگا ہاٹیز کے حساب سے کام کرتے ہوئے وائبریشن پیدا کرتی ہیں جو ہمارے موبائل فون کی وائبریشن سے کئی زیادہ ہے۔

محقق کاروں کا کہنا ہے کہ مائیکرویو میں پاپڑ، انڈا ابالنا، چائے بنانا، دودھ اور تمام مائع چیزوں کو گرم کر کے استعمال کرنا صحت کے لیے بہت نقصان دہ ہے تاہم سبزی ، روٹی یا چاول گرم کرنے کے بعد انہیں تھوڑی دیر بعد استعمال کیا جاسکتا ہے۔

نوٹ: اگر آپ مائیکرویو سے مستفید ہونا چاہتے ہیں تو اس کے ساتھ ملنے والے ہدایت نامے پر عمل کریں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top