The news is by your side.

اسرائیلی حملوں کے بعد بے گھر خاندان قبرستانوں میں پناہ لینے پر مجبور (تصاویر)

غزہ: اسرائیلی حملوں کے بعد غزہ کے بے گھر خاندانوں نے قبرستانوں میں پناہ لے لی ہے۔

تفصیلات کے مطابق نہتے فلسطینوں پر اسرائیل کے مظالم جاری ہیں، فلسطین میں انسانی المیے بھی جنم لینے لگے ہیں، بڑھتی ہوئی اموات سے جہاں قبرستان میں شہیدوں کے لیے جگہ کم پڑ گئی ہے، وہیں بے گھر افراد کے لیے بھی زمین تنگ ہو چکی ہے۔

غزہ انتظامیہ کا کہنا ہے کہ غزہ کا سب سے بڑا قبرستان بھی شہیدوں سے اب بھر گیا ہے، یہاں 7 لاکھ 75 ہزار افراد دفن ہیں، غزہ انتظامیہ کے مطابق اسرائیلی فوج نے جو تباہی پھیلائی ہے، اس کے بعد بے گھر افراد کے لیے بھی سر چھپانے کی جگہ نہیں رہی ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز اسرائیلی حملے میں 34 فلسطینی شہید ہوئے تھے۔

خبر رساں ایجنسی روئٹرز کی رپورٹ کے مطابق گنجان آباد غزہ کی پٹی میں، جگہ کی جنگ زندہ لوگوں کو مردہ کے خلاف کھڑا کر رہی ہے، کیوں کہ بے گھر فلسطینی قبرستانوں میں رہنے پر مجبور ہو گئے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ غزہ کی آبادی اگلے 30 سالوں میں دگنی سے بھی زیادہ ہو کر 4.8 ملین ہو جائے گی اور زمین پہلے ہی ختم ہو رہی ہے، جس کی وجہ سے غزہ کو آبادیاتی بحران کا سامنا ہے۔

نائب ویزر ہاؤسنگ ناجی سرحان نے بتایا کہ قلیل سے غزہ رئیل اسٹیٹ کے لیے مسابقت سخت ہے، رہائش اور کاشت کاری کی زمین دونوں کی طلب میں بہت اضافہ ہو چکا ہے، تاکہ بڑھتی ہوئی آبادی کو کھانا کھلانے میں مدد فراہم ہو۔

Comments

یہ بھی پڑھیں