ساتھی ملازم کے سمندر میں ڈوبنے پر انسٹرکٹر کو خون بہا ادا کرنے کا حکم Diving instructor
The news is by your side.

Advertisement

ساتھی ملازم کے سمندر میں ڈوبنے پر انسٹرکٹر کو خون بہا ادا کرنے کا حکم

ابوظہبی : متحدہ عرب امارات کی عدالت نے لاپرواہی دکھانے پر ڈائیونگ انسٹرکٹر (تیراکی کی تربیت دینے والا) کو جرمانہ اور سمندر میں ڈوبنے والے ملازم کے اہل خانہ کو 2 لاکھ درہم خون بہا ادا کرنے کی سزا سنا دی۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کے ٹاؤن خورفکان میں تیراکی کی تربیت دینے والے استاد کی لاپرواہی کے باعث ساتھی ملازم سمندر میں ڈوب کر ہلاک ہوگیا، جس کے بعد عدالت نے ڈائیونگ انسٹرکٹر پر 20 ہزار درہم جرمانہ عائد کردیا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کاکہنا تھا کہ کرمنل کورٹ کی دستاویزات کے مطابق سمندر میں ڈوب کر ہلاک ہونے والا شخص تیراکی کی تربیت  حاصل کرنے کے دوران ڈوبا تھا۔

عدالتی دستاویزات میں بتایا گیا ہے کہ ڈائیونگ انسٹرکٹر (تیراکی کی تربیت دینے والا) اپنے ساتھی ملازم کے ہمراہ کشتی رانی کرتے ہوئے سمندر میں گیا تھا تاکہ ڈوبنے والے شخص کو  تیراکی کی تریبت دے سکے لیکن دونوں کے پاس ڈائیونگ کا لائسنس نہیں تھا۔

اماراتی میڈیا کا کہنا تھا کہ بغیر لائسنس ڈائیونگ کرنے اور لاپرواہی برتنے کے جرم میں عدالت نے انسٹرکٹر کو ملازم کے اہل خانہ کو 2 لاکھ درہم خون بہا ادا کرنے کا حکم سنا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ ڈائیونگ انسٹرکٹر سمندر سے ساتھی ملازم کے بغیر واپس آیا اور پولیس کو ساتھی ملازم کے لاپتہ ہونے کی شکایت درج کروائی تھی۔

اماراتی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ ریسکیو ٹیمیں بہت کوشش کے باوجود بھی مذکورہ شخص کی لاش کی ڈھونڈنے میں ناکام رہیں۔


مزید پڑھیں : یواے ای: ایشیائی شخص کو کار تلے روندنے والے اماراتی شہری کو سزای


اد رہے کہ رواں ماہ کے اوائل میں متحدہ عرب امارات کی عدالت عالیہ نے ٹریفک حادثے میں ہلاک ایشیائی شخص کے کیس کی سماعت کرتے ہوئے ملزم کو حادثے کے دوران ہلاک ہونے والے شخص کے اہل خانہ کو خون بہا دینے کا حکم سنایا تھا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ نے کیس سماعت کے دوران اماراتی عرب کے مجرم ثابت ہونے کے بعد مجرم کو سزا سناتے ہوئے تین ماہ کے لیے جیل بھیجنے اور مقتول کے خاندان کو 1 لاکھ درہم جرمانہ ادا کرنے کا حکم دیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں