The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں بچی سے زیادتی اور قتل کے تین ملزمان کے ڈی این اے میچ کرگئے

کراچی: اورنگی ٹاؤن میں دو ہفتے قبل بچی کے ساتھ زیادتی اور قتل کے کیس میں مزید پیش رفت ہوئی ہے، تین ملزمان کے ڈی این اے میچ کرگئے۔

تفصیلات کے مطابق پولیس افسران کی خصوصی پریس کانفرنس میں بتایا گیا کہ بچی سے زیادتی اور قتل کیس میں چند ملزمان واردات کے پہلے ہی دن گرفتار کرلیے گئے تھے، بعد میں مزید ملزمان گرفتار کیے گئے۔

ایس ایس پی انویسٹی گیشن ذیشان نے پریس کانفرنس میں بتایا کہ جن گرفتار ملزمان کے ڈی این اے میچ ہوئے ہیں ان میں رحیم، فضل اور فضل کا بیٹا محراب شامل ہیں۔

ایس ایس پی عمر شاہد نے بتایا کہ بچی سے زیادتی و قتل کی اصل وجہ دشمنی تھی۔ خیال رہے کہ دو ہفتے قبل کراچی کے علاقے اورنگی ٹاؤن میں چھ سالہ بچی لاپتہ ہوگئی تھی، بعد ازاں جس کی لاش منگھوپیر کی کچرا کنڈی سے مل گئی تھی۔ بچی کو گلے میں پھندا ڈال کر بے دردی سے قتل کیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ اورنگی ٹاؤن میں ہونے والے اس افسوس ناک واقعے کی وجہ سے پورے علاقے میں غم و غصے کی ایک لہر دوڑ گئی تھی اور لوگوں نے سڑکیں بلاک کرکے شدید احتجاج کیا تھا جس میں گولی لگنے سے ایک شخص بھی جاں بحق ہوگیا تھا۔

اورنگی ٹاؤن میں تین بچوں کے قتل کا معمہ حل، قاتل گرفتار

احتجاج کے بعد وزیر داخلہ سندھ سہیل انور سیال نے واقعے کا نوٹس لے لیا تھا اور پولیس کو تفتیش تیز کرنے کی ہدایت کردی تھی۔ قبل ازیں پولیس کی طرف سے گرفتار ملزم کے بارے میں چھ سالہ بچی رابعہ کی والدہ نے کہا تھا کہ وہ اصل ملزم نہیں ہے۔

اس افسوس ناک واقعے پر سیاسی رہنماؤں نے بھی مذمتی بیانات جاری کیے، جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق، ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ فاروق ستار، خواجہ اظہار، پی ٹی آئی رہنماؤں اور سربراہ پی ایس پی مصطفیٰ کمال نے بچی سے زیادتی اور قتل پر شدید غم وغصے کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ قاتل کو فوری گرفتار کر کے عبرتناک سزا دی جائے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں