پشاور: پولیس اور ینگ ڈاکٹرز میں تصادم، تین گرفتار، 55 تالوں میں ایلفی -
The news is by your side.

Advertisement

پشاور: پولیس اور ینگ ڈاکٹرز میں تصادم، تین گرفتار، 55 تالوں میں ایلفی

پشاور: حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں ینگ ڈاکٹرز اور پولیس کے درمیان تصادم کے بعد تین ڈاکٹرز کو گرفتار کرلیا گیا، انتظامیہ نے اسپتال کے 55 تالوں میں ایلفی ڈالنے والے ینگ ڈاکٹرز کی فوٹیج جاری کردی،مظاہرین سے اظہار یک جہتی کے لیے رکن صوبائی اسمبلی نکہت اورکزئی بھی پہنچ گئیں۔

تفصیلات کے مطابق خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں حیات آباد میڈیکل کمپلکس میں ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کا آج 23 واں روز ہے، آج پھرینگ ڈاکٹرز اور پولیس آپس میں گتھم گتھا ہوگئے اور اسپتال اکھاڑہ بن گیا۔

ہڑتالی ینگ ڈاکٹرز نے او پی ڈی میں داخل ہونے کی کوشش جس پر پولیس نے مظاہرین نے لاٹھیاں برسا دیں، تصادم کے باعث کئی ڈاکٹرز زخمی ہوگئے، اسپتال میں ہنگامہ آرائی کے بعد پولیس نے 3 ڈاکٹرز کو گرفتار کر لیا۔ گرفتار ڈاکٹرز کی تعداد 15 ہوگئی۔

ڈاکٹرز سے اظہار یکجتی کے لیے رکن قومی اسمبلی نکہت اورکزئی اسپتال پہنچ گئیں اور مظاہرین کے ساتھ مل کر بھرپور احتجاج کیا۔

دوسری جانب اسپتال انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ہم مذاکرات کے لیے تیار ہیں مگر ینگ ڈاکٹرز نہیں مان رہے۔

پشاور کے دیگر 3 بڑے اسپتالوں میں بھی ینگ ڈاکٹرز کا احتجاج جاری ہے۔ پولیس کے مطابق ہڑتالی ڈاکٹرز کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا۔

ینگ ڈاکٹرز نے اسپتال کے 55 تالوں میں ایلفی ڈال دی

قبل ازیں رات گئے حیات آباد میڈیکل کمپلیکس کے ایک یا دو نہیں بلکہ 55 تالوں میں ایلفی ڈال دی گئی تھی جس پر معلوم کیا جارہا تھا کہ یہ حرکت کس نے کی تاہم اب انتظامیہ نے فوٹیج جاری کردی، کارروائی ینگ ڈاکٹرز کی کارستانی نکلی۔

فوٹیج سامنے آنے کے بعد پولیس نے ہنگامہ آرائی کے جرم میں تین ینگ ڈاکٹرز کو گرفتار کرلیا۔

فوٹیج میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ینگ ڈاکٹرز رات کو ڈھائی بجے او پی ڈی میں کیا کررہے تھے، اسپتال انتظامیہ نے فوٹیج کے ذریعے ان کا بھانڈا پھوڑ دیا۔

ینگ ڈاکٹرز چاہتے تھے کہ او پی ڈی کھل نہ سکے اور ان کے مطالبات مانے جائیں اسی لیے انہوں نے 55 تالوں میں ایلفی ڈالی۔

یاد رہے کہ ہڑتالی ینگ ڈاکٹرز سروس اسٹرکچر اور پی ڈی ایم آئی کو بحال کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں