ڈاکٹر عاصم 4 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے -
The news is by your side.

Advertisement

ڈاکٹر عاصم 4 روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

کراچی :‌ انسدادِ دہشتگردی کی عدالت نے سابق وفاقی وزیر ڈاکٹر عاصم کو چار روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا گیا .

تفصیلات کے مطابق سابق وفاقی وزیر ڈاکٹر عاصم حسین کو ہتھکڑیاں لگا کر سخت سیکیورٹی حصار میں بکتر بند گاڑی میں انسداد دہشت گردی کی عدالت میں لایا گیا، جہاں انھیں جج نعمت اللہ پھلپوٹو کے روبرو پیش کیا گیا.

عدالت میں تفتیشی افسر کی جانب سے 14 روزہ ریمانڈ کی استدعا کی گئی، جس پر ڈاکٹر عاصم حسین کے وکلاء نے ریمانڈ کی مخالفت کرتے ہوئے دلائل دیئے کہ ڈاکٹر عاصم حسین 90 روز تک رینجرز کی تحویل میں رہنے کے بعد مزید ریمانڈ ناانصافی ہوگی.

ڈاکٹر عاصم کے ریمانڈ پر پراسیکیوٹر جنرل اور رینجرز کے وکیل کے درمیان اختلافات بھی سامنے آئے، رینجرز کے وکیل نے ڈاکٹر عاصم کے چودہ روزہ ریمانڈ کی استدعا کی لیکن پراسیکیوٹر جنرل سندھ نے صرف چار روزہ ریمانڈ کی درخواست کی، اس پر دونوں وکلا میں جملوں کا تبادلہ بھی ہوا جس میں رینجرز کے وکیل کا موقف تھا کہ پراسیکیوٹر جنرل اس کیس میں نہیں بول سکتے یہ رینجرز کا کیس ہے تاہم عدالت نے ڈاکٹر عاصم کا چار روزہ ریمانڈ منظور کرتے ہوئے انہیں پولیس کی تحویل میں دے دیا.

ڈاکٹر عاصم حسین کی انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیشی کے وقت ان کی اہلیہ اور بیٹی بھی کمرہ عدالت میں موجود تھیں.

واضح رہے کہ گزشتہ روز نوے روز سے گرفتار سابق وفاقی وزیر ڈاکٹر عاصم کیخلاف گلبرگ تھانے میں انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا. مقدمے میں وسیم اختر، سلیم شہزاد،انیس قائم خانی اورقادر پٹیل کو بھی نامزد کیا گیا ہے.

ذرائع کے مطابق جے آئی ٹی رپورٹ میں ڈاکٹر عاصم پر دہشتگردوں کو سہولت دینے کا الزام ہے، رپورٹ کے مطابق ڈاکٹر عاصم ملزمان کو اسپتال میں علاج کی سہولتیں فراہم کرتے تھے۔

دوسری جانب نیب سندھ کی سفارش پر ڈاکٹر عاصم اور شرجیل میمن کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں شامل کرلیا گیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں