site
stats
اہم ترین

ندیم نصرت پاکستان مخالف سرگرمیوں میں مصروف ہیں، فاروق ستار

کراچی : متحدہ قومی موومنٹ کے سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا ہے کہ ندیم نصرت امریکامیں پاکستان مخالف سرگرمیوں میں مصروف ہیں، مہاجروں کی نمائندگی کادعویٰ کرکے ایسی باتیں نہ کی جائیں، لندن والوں کےرویوں سےافسوس ہوتا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا کہ ایم کیوایم پاکستان عوام میں موجود ہے، پاکستان مخالف لابی کے ساتھ مل کرغلط زبان استعمال کی جارہی ہے، مہاجروں کانام استعمال کرنےکی مذمت کرتے ہیں۔

ویڈیو دیکھیں:

لندن والوں کارویہ 22اگست کی پالیسی کاتسلسل ہے، ان کا کہنا تھا کہ ندیم نصرت کی پاکستان مخالف لابی کے ساتھ سرگرمیاں قومی سلامتی کا معاملہ ہے، پاکستان مخالف سرگرمیاں انتہائی تشویشناک ہیں۔

ملک میں فرقہ واریت کو ہوا دینے کی سازش ہو رہی ہے، لندن سے آنے والے آڈیو بیانات اور پاکستان مخالف جارحانہ رویہ اختیارکیا جانا نامناسب عمل ہے۔

فاروق ستار کا کہنا تھا کہ قومی سلامتی کونقصان پہنچانےکی مذمت کرتےہیں، ایم کیوایم پاکستان عوام میں موجودہے، عوام میں رہ کران کےمسائل حل کرنےکی کوشش کررہےہیں،  لندن والوں کےرویوں سےافسوس ہوتاہے، ایسےرویوں سےہماری حب الوطنی کومشکوک بنایا جارہا ہے۔

مہاجروں کو پاکستان کیخلاف کھڑا کرنے کی سازش کی جارہی ہے 

ڈاکٹرفاروق ستار کا کہنا تھا کہ ڈائنابیکراورجان مکین سےہمیں کوئی توقع نہیں، سازش کی جارہی ہے کہ مہاجروں کو پاکستان کیخلاف کھڑا کیا جائے، انہوں نے کہا کہ ایم کیوایم امریکا کی اکثریت ہمارےساتھ ہے، کیونکہ امریکا کےکارکنوں نے پاکستان کے ساتھ کھڑےہونے کا فیصلہ کیاہے،

مہاجروں کی نمائندگی کادعویٰ کرکےایسی باتیں نہ کی جائیں، ہم یہاں پاکستان کی نمائندگی کرہےہیں۔ ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا کہ ایم کیوایم پاکستان 22اگست کی پالیسی کو مسترد کرتےہوئے ایم کیوایم پاکستان 23اگست کی پالیسی پرعمل پیرا ہے۔

ہمارے کئی کارکنان آج بھی جیلوں میں ہیں 

ایم کیوایم پاکستان کےکئی کارکنان آج بھی جیلوں میں ہیں، مسلسل22اگست کودہرایا جا رہا ہے، مظلومیت کا رونا رو کرپاکستان مخالف لابنگ کرناصحیح عمل نہیں۔

امریکی کانگریس سے پاکستان کی امداد بند کرنے کی بات مضحکہ خیز ہے، ایک ایک مہاجر نے طے کیاہے کہ ہمارا جینا مرنا پاکستان کیلئے ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top