The news is by your side.

Advertisement

لاہور : ڈاکٹر نادیہ معذوری کے باوجود ہمت اور حوصلے کی مثال بن گئیں

لاہور : ملک و قوم کی خدمت کا مقصد اور جذبہ سچا ہو تو جسمانی معذوری اس کی راہ میں رکاوٹ نہیں بن سکتی، اور یہ کام لاہور کی ڈپٹی ڈی ایچ او ڈاکٹر نادیہ نے کر دکھایا ہے۔

لاہور کی ڈاکٹر نادیہ کسی بھی رکاوٹ کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے ہمت اورحوصلے کی مثال بن گئیں، انہوں نے پولیو سے ہونے والی معذوری کو اپنی طاقت بنالیا وہ پاکستان کو پولیو سے پاک کرنے کے لیے جنگ لڑ رہی ہیں۔

ڈاکٹر نادیہ جو نو ماہ کی عمر میں پولیو جیسے موذی مرض کا شکار ہوگئی تھیں لیکن تمام ترمصائب کے باوجود انہوں نے اپنی معذوری کو مجبوری نہ بننے دیا اور آج بطور ڈپٹی ڈسٹرکٹ آفیسر ہیلتھ لاہور میں انسداد پولیو مہم چلارہی ہیں۔

اے آر وائی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر نادیہ نے بتایا کہ بچپن میں میری ایکسی نیشن اس طرح سے نہیں ہوئی جس طرح ہونے چاہیے تھی لیکن مین چاہتی ہوں کہ پاکستان کا کوئی بچہ پولیو ویکسین سے محروم نہ رہے۔

ڈاکٹر نادیہ خود تمام پولیو ٹیموں کو مانیٹر کرتی ہیں تاکہ ہر بچہ پولیو سے بچاؤ کے قطرے پیے اور کوئی بھی ان کی طرح کوئی معذوری کاشکار نہ ہو۔

ڈاکٹر نادیہ اپنی لگن اور محنت کی وجہ سے تمام پولیو ورکرز کے لئے مشعل راہ بن گئی ہیں، نادیہ کی پولیو کےخلاف جنگ تو پیدا ہوتے ہی شروع ہوگئی تھی لیکن پانچ سال سے وہ بطور ذمہ دار افسر مہم کا باقاعدہ حصہ ہیں۔

روزانہ دفتر میں پولیو سے متعلق امور کے انجام دہی کے بعد اپنی ٹیم کے ساتھ علاقے کی گلیوں میں سرگرم رہتی ہیں تاکہ کوئی بچہ پولیو قطرے پینے سے محروم نہ رہ جائے، محکمہ صحت کے افسران کی جانب سے پولیو مہم کو موثر بنانے کیلئے ڈاکٹرنادیہ کی مثال قابل تقلید ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں