The news is by your side.

Advertisement

نشے میں دھت پائلٹ نے مسافروں کی زندگی داؤ پر لگا دی

نشے میں دھت پائلٹ نے مسافروں کی زندگی داؤ پر لگا دی اور کاک پٹ میں اسلحے کے ساتھ جہاز اڑانے پہنچ گیا۔

واشنگٹن پوسٹ کے مطابق 52 سالہ پائلٹ جیمز کلفٹن نیویارک کے بفیلو سے فورٹ لاڈرڈیل فلوریڈا کے لیے روانہ ہورہا تھا جب ایک ٹرانسپورٹیشن سیکیورٹی ایجنٹ نے ایک چیک پوائنٹ پر پائلٹ کا عجیب و غریب رویہ دیکھا اور ایئر لائن کے اہلکاروں کو ٹیک آف سے پہلے پائلٹ کا معائنہ کرنے لیے کہا۔

جب پائلٹ کا طبی معائنہ کیا گیا تو معلوم ہوا کہ اس کے خون میں الکوحل کی سطح 0.17 تھی، جو جہاں اڑنے کی قانونی حد سے چار گنا زیادہ تھی۔

بعد ازاں ائیرپورٹ پولیس نے مبینہ طور پر کلفٹن کو کاک پٹ سے ہٹا دیا ، پائلٹ نے شراب پینے کا اعتراف کیا، لیکن بعد ازاں اپنا بیان بدل دیا اور کہا ایک رات پہلے کتنی شراب پینی تھی۔

واشنگٹن پوسٹ کے ذریعے حاصل کی گئی پولیس رپورٹ کے مطابق کلفٹن نے پہلے کہا تھا کہ اس نے پانچ یا چھ مشروبات پیئے لیکن پھر اس نے سات یا آٹھ پینے کا اعتراف کیا۔

پائلٹ کو مبینہ طور پر ڈیوٹی سے ہٹا دیا گیا تاہم مزید تادیبی کارروائی کی تفصیلات سامنے نہیں آئیں۔

پولیس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کلفٹن فیڈرل فلائٹ ڈیک آفیسر پروگرام کا حصہ ہیں، جو پائلٹوں کو کاک پٹ اور ہوائی جہاز کو حملوں سے بچانے کی تربیت دیتا ہے اور پروگرام کے رہنما خطوط کے تحت، تربیت یافتہ پائلٹ کاک پٹ میں آتشیں اسلحہ اور گولہ بارود رکھ سکتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں