The news is by your side.

Advertisement

شہباز حکومت کی مشکلات میں اضافہ : آئی ایم ایف نے آئندہ مذاکرات کیلئے کڑی شرط رکھ دی

اسلام آباد : پٹرول، ڈیزل اور بجلی مہنگی کرنے کی شرط پر آئی ایم ایف نے پاکستان سے اٹھارہ مئی دوحہ میں مذاکرات پر آمادگی ظاہر کردی۔

تفصیلات کے مطابق ملکی معیشت کی صورتحال پر آئی ایم ایف نے پاکستان کے دورے سے انکار کردیا اور پٹرول، ڈیزل اور بجلی مہنگئی کرنے کی شرط پر اٹھارہ مئی کو دوحہ میں مذاکرات کیلئے تیار ہوگیا۔

اس حوالے سے ماہر معاشیات مزمل اسلم نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں کہا ہے کہ آئی ایم ایف وفدپاکستان کو اب دس مئی کونہیں آرہا ، آئی ایم ایف چاہتا ہے حکومت پٹرول، ڈیزل، بجلی کی قیمتیں بڑھائے ، قیمتیں بڑھیں تو آئی ایم ایف وفد دوحہ میں 18 مئی کو ملے گا۔

مزمل اسلم کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف چاہتاہے آئندہ بجٹ میں عام آدمی پر ٹیکس کی بھرمار کریں، امپورٹڈ گورنمنٹ کو مدد دینے کادوست ممالک کا فی الحال کوئی ارادہ نہیں۔

خیال رہے شہباز حکومت ایندھن پر دی جانے والی سبسڈی واپس لینے پر پہلے ہی رضامندی ظاہر کرچکی ہے اورآئی ایم ایف سے مذاکرات سے قبل وزیراعظم شہباز شریف کو فیول سبسڈی کے بارے میں فیصلہ کرنا ہوگا۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ وزیراعظم شہباز شریف نے وزارت خزانہ کو ہدایت کی ہے کہ وہ آئی ایم ایف سے ایندھن کی قیمتوں میں اضافے کی شرط کو جزوی طور پر نرم کرنے کو کہے۔

دوسری جانب سعودی عرب، چین اور متحدہ عرب امارات کے ساتھ قرض کے نئے سودوں کو حتمی شکل دینے میں تاخیر ہے کیونکہ تمام قرضوں کو آئی ایم ایف کے معاہدوں کے ساتھ منسلک کر دیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں