The news is by your side.

Advertisement

فارن فنڈنگ کیس: پی ٹی آئی کی اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ پبلک نہ کرنے کی استدعا

اسلام آباد: تحریک انصاف نے مبینہ غیر ملکی فنڈنگ کیس میں الیکشن کمیشن سے اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ پبلک نہ کرنے کی استدعا کردی اور کہا وکیل ہماری وضاحت تک رپورٹ کوخفیہ رکھاجائے۔

تفصیلات کے مطابق چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ کی سربراہی میں تین رکنی کمیشن نے پی ٹی آئی مبینہ غیر ملکی فنڈنگ کیس کی سماعت کی ، درخواست گزار اکبر ایس بابر ، پی ٹی آئی کے اسد عمر ، عامر کیانی ، پی ٹی آئی وکیل شاہ خاور الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے۔

پی ٹی آئی اکاؤنٹس کی جانچ پڑتال کے لیے قائم اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ پیش کی گئی ، چیف الیکشن کمشنر نے ریمارکس دیے کہ اسکرروٹنی کمیٹی کی رپورٹ آ گئی ہے، جس پر اکبر ایس بابر کے وکیل نے استدعا کی کہ جب اسکروٹنی کمیٹی کے بعد ریکارڈ الیکشن کمیشن کے پاس آئے گا تو ہمیں فراہم کی جائے۔

پی ٹی آئی کے وکیل شاہ خاور نے مؤقف اپنایا یہ رپورٹ صرف فریقین کے لیے ہے ، رپورٹ فریقین کو دے دی جائے اور اس رپورٹ کو اس وقت تک پبلک نہ کیا جائے۔

ممبر الیکشن کمیشن نے واضح کیا یہ تو ان کیمرا نہیں ہے، جس پر شاہ خاور کا کہنا تھا کہ ہم وضاحت جمع کرا دیں گے ، اس کے بعد بے شک الیکشن کمیشن اس رپورٹ کو اوپن کر دے لیکن اس وقت تک خفیہ رکھا جائے۔

شاہ خاور نے دلائل میں کہا کہ دیگر جماعتوں کے اکاؤنٹس کی اسکروٹنی کا عمل مکمل ہو جانے دیں ، وہ رپورٹس بھی حتمی مراحل میں ہے ، اس کے بعد سب کو اکھٹے دیکھیں۔

چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ سب رپورٹس کو کیسے اکھٹا کر سکتے ہیں، رپورٹ کی کاپیاں تمام فریقین کو فراہم کریں۔

وکیل اکبر ایس بابر نے شکوہ کیا کہ جو ڈیٹا اور اکاؤنٹس الیکشن کمیشن نے خود حاصل کیے، وہ بھی ہمیں نہیں بتائے گئے، جس پر چیف الیکشن کمشنر نے ریمارکس دیے کہ کمیشن آرڈر پاس کرنے کی پوزیشن میں نہیں کہ وہ کہے کہ فریقین رپورٹ کو پبلک کریں یا نہیں۔

وکیل اکبر ایس بابر کا کہنا تھا کہ ہر کیس میں سب چیزیں پبلک ہوتی ہیں، جس کے جواب میں وکیل تحریک انصاف نے کہا کہ الیکشن کمیشن آرڈر کر دے کہ فریقین اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ کو پبلک نہ کرے۔

جس پر ممبر الیکشن کمیشن نے واضح کیا اوپن کورٹ میں ہم کیسے پابندی لگا سکتے ہیں کہ رپورٹ کو پبلک نہ کیا جائے، اتفاق ہے،رپورٹ پبلک کرنےکی ممانعت کی پوزیشن میں نہیں ، بعد ازاں الیکشن کمیشن نے کیس کی سماعت پندرہ روز کے لئے ملتوی کردی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں