site
stats
اہم ترین

حکومت ختم نبوت ﷺ کے حلف نامے کو پہلے والی شکل میں لانے پر متفق

اسلام آباد: حکومت نے جلد بازی میں منظور کیے گئے انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 میں سنگین غلطی کو کلیریکل غلطی قرار دے دیا۔ اسپیکر ایاز صادق کا کہنا ہے کہ حلف نامے کو پہلے والی شکل میں واپس لانے کے لیے ترمیمی بل لایا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق نا اہل نواز شریف کو ن لیگ کی صدارت کا اہل بنانے کے لیے انتخابی اصلاحات ایکٹ میں جلد بازی میں ترمیم تو کرلی گئی تاہم جب ختم نبوت کے حلف نامے میں تبدیلی کا معاملہ سامنے آیا تو اپوزیشن نے حکومت کو آڑے ہاتھوں لے لیا۔

حکومت نے پہلے تو کسی تبدیلی سے ہی انکار کردیا، اب حکومت نے اس سنگین غلطی کو کلیریکل غلطی قرار دے دیا۔

مزید پڑھیں: ختم نبوت بل سے متعلق جھوٹ نہ بولا جائے، سعد رفیق

اسلام آباد میں پارلیمانی رہنماؤں کے اجلاس کے بعد اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ اس معاملے کو جلد حل کرلیں گے۔

ایاز صادق کا کہنا تھا کہ مسئلے کے حل کے لیے سب کو مل کر لائحہ عمل طے کرنا چاہیئے۔ سب نے مل کر اس مسئلے کو حل کرنے کی کوشش کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ حلف نامے کے معاملے کو اصل حالت میں واپس لایا جائے گا۔ پارلیمانی رہنما اپنی اپنی جماعتوں سے مشاورت کریں گے۔

ان کے مطابق حلف نامے کی اصل شکل میں بحالی پر اتفاق ہوگیا ہے۔ معاملے پر آج ہی مشاورت کر کے کل قومی اسمبلی میں لائیں گے۔

دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی نے بتایا کہ آج کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ حلف نامے کو پہلے والی شکل میں واپس لانے کے لیے ترمیمی بل لایا جائے گا۔ تاخیر نہیں کریں گے فی الفور الیکشن ایکٹ بل 2017 میں ترمیم کی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن بل کی شق 203 پر بھی نظر ثانی کی درخواست کی ہے۔

یاد رہے کہ دو روز قبل نااہل نواز شریف کو مسلم لیگ ن کی صدارت کا اہل بنانے کے لیے انتخابی اصلاحات ایکٹ 2017 سینیٹ کے بعد قومی اسمبلی میں بھی منظور کرلیا گیا تھا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top