The news is by your side.

انگلینڈ ٹی 20 کرکٹ کا نیا عالمی چیمپئن بن گیا

انگلینڈ نے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے فائنل میں پاکستان کو 5 وکٹوں سے شکست دے کر نیا عالمی چمپئن بننے کا اعزاز حاصل کرلیا۔

میلبرن میں کھیلے گئے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے فائنل میچ میں انگلینڈ نے مطلوبہ 138 رنز کا ہدف ایک اوور قبل 5 وکٹوں کے نقصان پر حاصل کرلیا۔

پاکستان کو ہدف کے دفاع  میں پہلی کامیابی جلد مل گئی تھی جب سیمی فائنل میں بھارتی بولنگ کے پرخچے اڑانے والے ایلکس ہیلز کو شاہین شاہ آفریدی نے اپنے پہلے ہی اوور کی آخری گیند پر بولڈ کردیا، 32 کے مجموعے پر فل سالٹ کو حارث رؤف نے پویلین بھیج دیا۔

اس موقع پر کپتان جوز بٹلر نے جارحانہ بلے بازی کرتے ہوئے ایک چھکا اور دو چوکے لگائے مگر انہیں مزید خطرناک بننے سے قبل حارث رؤف نے وکٹوں کے عقب میں رضوان کے ہاتھوں کیچ کراکے انہیں واپسی کا پروانہ تھمایا۔

پاکستان کو چوتھی کامیابی ہیری بروک کی وکٹ کی صورت میں ملی جس کو شاداب خان کی گیند پر شاہین شاہ نے کیچ آؤٹ کیا۔

اس موقع پر میچ میں سنسنی پیدا ہوگئی تھی تاہم شاہین شاہ ہیری بروک کا کیچ لینے کے دوران زخمی ہونے کے باعث اپنے کوٹے کے اوور مکمل نہ کراسکے اور کوٹے کے تیسرے اوور کی پہلی گیند کرانے کے گراؤنڈ سے واپس چلے گئے جو میچ کا ٹرننگ پوائنٹ ثابت ہوا، شاہین شاہ کا ادھورا اوور مکمل کرانے کیلیے پارٹ ٹائم بولر افتخار احمد آئے اور 5 گیندوں پر 13 رنز دے دیے۔

اس موقع پر محمد وسیم جونیئر آئے تو انگلش بلے بازوں نے تین چوکوں کے ساتھ اس اوور میں 18 رنز بٹور کر ہدف تک رسائی کو آسان تر بنا دیا۔

انیسویں اوور میں محمد وسیم نے معین علی کو بولڈ کردیا تاہم اس وقت تک بازی ہاتھ سے نکل چکی تھی اور انگلینڈ کو میچ جیتنے کے لیے صرف 6 رنز درکار تھے۔

انگلینڈ کی جانب سے بین اسٹوکس نے ناقابل شکست 52 رنز کی شاندار اننگ کھیل کر اپنی ٹیم کی جیت میں اہم کردار ادا کیا، کپتان جوز بٹلر نے 17 گیندوں پر 26 رنز بنائے۔

پاکستان کی جانب سے محمد حارث نے 23 رنز کے عوض دو وکٹیں حاصل کیں، شاداب خان، محمد وسیم، شاہین آفریدی نے ایک ایک کھلاڑی آؤٹ کیا۔

اس سے قبل انگلینڈ نے ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کا فیصلہ کیا، پاکستان نے مقررہ 20 اوورز میں 8 وکٹوں کے نقصان پر 137 رنز بنائے، پاکستان کی جانب سے کوئی بھی بلے باز نصف سنچری نہ بنا سکا اور نہ ہوئی بڑی پارٹنر شپ قائم ہوئی، شان مسعود 38 رنز بنا کر ٹاپ اسکورر رہے۔

کپتان بابر اعظم 32 اور شاداب خان 20 رنز بناکر نمایاں بلے باز رہے۔

انگلینڈ کی جانب سے سیم کورن سب سے کامیاب بولر رہے جنہوں نے صرف 12 رنز دے کر 3 وکٹیں حاصل کیں جس میں شان مسعود اور محمد رضوان کی قیمتی وکٹیں بھی شامل تھیں۔ عادل رشید نے 22 اور کرس جورڈن نے 27 رنز دے کر دو دو وکٹیں حاصل کیں، ووکس نے 32 رنز دے کر ایک کھلاڑی آؤٹ کیا۔

فائنل میچ کے لیے دونوں ٹیموں نے کوئی تبدیلی نہیں کی تھی اور اپنے سیمی فائنلز کے فاتح اسکواڈز کو برقرار رکھا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں