The news is by your side.

Advertisement

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت، یورپی پارلیمنٹ کی طرف سے دستاویز جاری

برسلز: یورپی پارلیمنٹ نے مقبوضہ کشمیر میں جاری جارحیت اور تازہ ترین صورت حال کے بارے میں ایک تازہ دستاویز جاری کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق دستاویز میں کہا گیا ہے کہ پانچ اگست سے مقبوضہ وادی میں ہزاروں سیاسی کارکنوں اور رہنماﺅں کو گرفتار کیا گیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق یورپی پارلیمنٹ کی ریسرچ سروس کی طرف سے جاری دستاویز میں مقامی اور بین الاقوامی ذرائع ابلاغ کا حوالہ دیتے ہوئے مقبوضہ علاقے میں بھارتی فوجیوں کی طرف سے پکڑ دھکڑ کی کارروائیوں کا تزکرہ کیا گیا ہے۔

دستاویز میں ذرائع مواصلاتی کی بندش، اہلخانہ کو اپنے رشتہ داروں سے ملاقات سے روکنا اور ادویات کی قلت اور اسپتالوں تک رسائی میں کشمیریوں کو درپیش مشکلات کا ذکر کیاگیا ہے۔

جرمنی میں کشمیریوں کے حق میں بھارتی قونصلیٹ کے سامنے مظاہرہ

دستاویزر میں کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کے بھارت کے فیصلے کے حوالے کہاگیا ہے کہ اس اقدام سے مقبوضہ علاقے میں آبادی کا تناسب بگاڑنے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے۔

دستاویز میں خبردار کیاگیا ہے کہ مقبوضہ علاقے میں انسانی بحران پید اہونے کا خدشہ ہے اور نوجوان انتہا پسندی کی طرف مائل ہوسکتے ہیں۔

کشمیر کونسل یورپ کے چیئرمین علی رضا سید نے برسلز سے جاری ایک بیان میں مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورتحال کے بارے میں یورپی پارلیمنٹ کی طرف سے تازہ ترین دستاویز کے اجراکا خیرمقدم کیا ہے تاہم انہوں نے اقوام متحدہ اور یورپی یونین سمیت عالمی برداری سے اپیل کی کہ وہ مقبوضہ علاقے سے کرفیو ہٹانے اور کشمیریوں کے بنیادی حقوق کی بحالی کیلئے بھارت پر دباﺅ بڑھائیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں