The news is by your side.

Advertisement

خروج وعودہ پر اگر واپسی نہ ہو تو کیا وزٹ ویزے پر سعودی عرب جا سکتے ہیں؟

ریاض: سعودی محکمہ امیگریشن اینڈ پاسپورٹ ’جوازات‘ کے ٹوئٹر پر ایک شخص نے دریافت کیا کہ سعودی عرب میں ڈاکٹر کے پیشے پر کام کرتا تھا، 2019 میں خروج وعودہ پر گیا مگر واپس نہیں آیا، کیا اب وزٹ ویزے پر جا سکتے ہیں؟

جوازات کا کہنا تھا کہ خروج وعودہ قانون کے مطابق وہ تارکین وطن جو اقامہ پر مملکت میں مقیم ہیں، خروج وعودہ کی خلاف ورزی کے مرتکب ہونے کی صورت میں انھیں مملکت میں 3 برس کے لیے بلیک لسٹ کر دیا جاتا ہے۔

جوازات کے مطابق ایسے افراد جنھیں ’خرج ولم یعد‘ کی کیٹگری میں شامل کیا جاتا ہے وہ تین برس تک کسی دوسرے ویزے پر مملکت نہیں آ سکتے۔

پابندی کی مدت کے دوران بلیک لسٹ کیے جانے والے غیر ملکی صرف اپنے سابق کفیل کی جانب سے جاری کردہ نئے ویزے پر ہی مملکت آ سکتے ہیں، بہ صورت دیگر انھیں تین برس انتظار کرنا ہوگا، اور بلیک لسٹ کی مدت مکمل ہونے کے بعد وہ کسی بھی ویزے پر مملکت آ سکتے ہیں۔

واضح رہے جو افراد خروج وعودہ کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوتے ہیں انھیں چاہیے کہ وہ مدت کا تعین قمری کیلنڈر کے حساب سے کریں، جو سعودی عرب میں رائج ہے، کیوں کہ جوازات کے سسٹم میں قمری تاریخوں کے حساب سے مدت کا تعین کیا جاتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں