The news is by your side.

صنعتوں کو گیس کی بندش، پٹرولیم ڈویژن کی اہم وضاحت

پٹرولیم ڈویژن نے صنعتوں کو گیس کی بندش سے متعلق وضاحتی بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ صنعتوں کو گیس کی باقاعدہ فراہمی معطل نہیں کی جارہی۔

پٹرولیم ڈویژن کی جانب سے جاری وضاحتی بیان میں کہا گیا ہے کہ سوئی سدرن گیس بجلی پیدا کرنیوالی صنعتوں کی گیس معطل کر رہا ہے، دیگر صنعتوں کو گیس کی باقاعدہ فراہمی معطل نہیں کی جا رہی۔ اس حوالے سے صنعتی صارفین کے نام خطوط کی صنعتی اور تجارتی تنظیموں نے غلط تشریح کی۔

پٹرولیم ڈویژن کا کہنا ہے کہ سوئی سدرن نے گیس سے بجلی پیدا کرنیوالے صنعتی صارفین کو خطوط لکھے تھے جس میں کہا تھا کہ گیس کی فراہمی صرف بجلی کی پیداوار کیلیے بند کی جا رہی ہے اس سلسلے میں بجلی پیدا کرنے والے صنعتی صارفین کو ساڑھے 3 ماہ گیس معطل کی جا رہی ہے۔

وزارت پٹرولیم کے مطابق کیپٹو پلانٹس کو 15 نومبرسے 28 فروری تک گیس فراہمی معطل رہے گی۔ گیس کے ذخائر 10 فیصد کی سالانہ شرح سے تیزی سے ختم ہو رہے ہیں۔

واضح رہے کہ سوئی سدرن گیس نے صنعتوں کو تین ماہ کیلیے گیس کی فراہمی بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس کے مطابق صنعتوں کو کل 15 نومبر سے 28 فروری تک گیس کی فراہمی بند رہے گی۔

یہ بھی پڑھیں: کراچی کی صنعتوں کے لیے بُری خبر

سوئی سدرن گیس کمپنی نے یہ فیصلہ گیس لوڈ منیجمنٹ کے تحت کیا ہے اور ترجمان سوئی سدرن گیس کا کہنا ہے کہ گیس کی کمی کی وجہ سے صنعتوں کو گیس فراہم نہیں کر سکتے، پہلی ترجیح بلوچستان اور سندھ کے گھریلو صارفین ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں