پاک افغان کشیدگی کے باوجود پاکستانی برآمدات میں 2 سال کا ریکارڈ اضافہ
The news is by your side.

Advertisement

پاک افغان کشیدگی کے باوجود پاکستانی برآمدات میں 2 سال کا ریکارڈ اضافہ

کراچی: اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے مطابق افغان منڈی میں پاکستانی اشیاء کی مانگ میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے جس کی وجہ سے برآمدات 2 سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔

تفصیلات کے مطابق پاک افغان تنازع اور کشیدگی کے باوجود پاکستانی اشیاء کی افغانستان کو بھیجے جانے والی اشیاء دو سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئیں جس کے تحت نئے مالی سال کے ابتدائی 10 ماہ یعنی اپریل تک برآمدات 28 کروڑ 20 لاکھ ڈالر تک پہنچیں۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے جاری ہونے والی حالیہ رپورٹ کے مطابق نئے مالی یعنی جولائی 2017 سے اپریل 2018 تک افغانستان کے لیے پاکستانی برآمدات ایک ارب 28 کروڑ ڈالر تک پہنچ گئی تھیں جو گزشتہ مالی سال میں صرف 95 کروڑ 60 لاکھ ڈالر  تھیں۔

واضح رہے کہ دونوں ممالک کے درمیان جاری تنازعات اور کشیدگی کا فائدہ بھارت نے اٹھانے کی کوشش کرتے ہوئے افغان مارکیٹوں تک رسائی حاصل کرلی تھی مگر اُس کے باوجود پاکستانی اشیاء کی مانگ میں دن بہ دن مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔

اعداد و شمار کے مطابق مالی سال 2015-2014 کے دوران پاکستان سے افغانستان بھیجی جانے والی برآمدات کا حجم ایک ارب 69 کروڑ ڈالر تھا جو مالی سال 2016 میں کم ہوکر 1 ارب 23 کروڑ تک پہنچ گیا تھا، دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہوا تو معاشی سال 2017 میں حجم مزید کم ہوکر 1 ارب 16 کروڑ 50 لاکھ ڈالر تک پہنچ گیا تھا۔

معاشی ماہرین کے مطابق دونوں ممالک کےمابین ہونے والے اعلیٰ سطح رابطوں اور پاک فوج کے دوٹوک مؤقف کے بعد برآمدات میں اضافہ ہوا اور اگر یہ سلسلہ اسی طرح جاری رہا تو بقیہ 2 ماہ میں تین سال کا ریکارڈ ٹوٹ جائے گا۔

یاد رہے کہ پاکستان سے زیادہ تر اشیائے خوردونوش جیسے گندم، آٹا، چاول، گوشت ، کپڑے برآمد کیے جاتے ہیں مگر گزشتہ کچھ عرصے سے بھارتی تاجروں نے ٹیکسٹائل مصنوعات میں اپنا اثرورسوخ قائم کیا جس کے باعث پاکستانی کپڑے کی کھپت بہت کم ہوگئی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں