The news is by your side.

Advertisement

انتہا پسند ہندوﺅں کی سازشیں قبول نہیں، کشمیری عوام سڑکوں پر نکلے، حریت رہنماؤں کی اپیل

سرینگر : مقبوضہ کشمیرمیں مشترکہ حریت فورم نے کشمیری عوام سے اپیل کی ہے کہ ک ہوہ اپنے جائز حق اور بھارتی مظالم کیخلاف سڑکوں پر نکل کر بھرپور احتجاج کریں۔ 

مقبوضہ کشمیر میں مشترکہ حریت فورم نے سول سوسائٹی اور وکلاء، صحافیوں، تاجروں، ٹرانسپورٹروں اور ملازمین کی انجمنوں کے اشتراک سے کشمیری قوم ، وادی کشمیر، جموں اور کارگل کے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ سڑکوں پر نکل کر اپنے ناقابل تنسیخ حق خود ارادیت کے لیے آواز بلند کریں۔

کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق فورم نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کشمیری عوام پر زوردیا کہ وہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کو تبدیل اور متنازعہ علاقے کو ٹکڑوں میں تقسیم کرنے کی بھارت کی مذموم کارروائی کے خلاف احتجاج کریں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ مظاہروں کی کال کشمیریوں کی خواہشات کے احترام میں دی گئی ہے۔ حریت فورم نے کہا کہ کشمیری قوم انتہا پسند ہندوﺅں کی سازشوں کو ہرگز قبول نہیں کرے گی اور ہندو بنیاد پرستوں کو اپنے وطن میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دے گی۔

+فورم نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ کشمیری شہداء کی قربانیوں کے ساتھ غداری نہیں کی جائے گی اور کشمیری عوام اپنی ماﺅں بہنوں اور بیٹیوں کو ہندو انتہا پسندوں کے حملوں سے محفوظ رکھنے کی پوری صلاحیت رکھتے ہیں۔

مشترکہ حریت فورم نے کشمیری عوام سے اپیل کی کہ وہ کرفیو اور دیگر پابندیوں کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے سڑکوں پر نکلیں۔

بیان میں کہا گہا ہے کہ جموں و کشمیر کشمیریوں کی سرزمین ہے جو اپنے مستقبل کا فیصلہ خود کریںگے، مشترکہ فورم نے مزید کہا کہ کشمیری بھارتی قبضے کو کبھی تسلیم نہیں کریں گے چاہے اس کا نتیجہ کچھ بھی نکلے۔

دریں اثنا انتظامیہ نے دفعہ370کی منسوخی اور مقبوضہ علاقے کی خصوصی حیثیت کو تبدیل کرنے کے بھارتی اقدام کے خلاف احتجاج مظاہروں کو روکنے کیلئے جمعہ کو بارہویں روز بھی پوری مقبوضہ وادی میں سخت کرفیو اور دیگر پابندیوں کا نفاذ برقرار رکھا۔

لوگوں کو گھروں میں محصور رکھنے کیلئے وادی کے اطراف ہزاروں بھارتی فوجی تعینات ہیں، انٹرنیٹ ، ٹیلیفون اور دیگر مواصلاتی ذرائع کی معطلی کی وجہ سے مقبوضہ وادی کا بیرونی دنیا سے رابطہ منقطع ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں