The news is by your side.

Advertisement

فیس بک نے مسلمان خواتین کیخلاف بورس جانسن کا نفرت انگیز بیان ہٹا دیا

فیس بُک نے برطانوی وزیراعظم بورس جانسن کا مسلمان خواتین کے خلاف دئیے گئے متنازع بیان کو نفرت انگیز قرار دیتے ہوئے کئی سال بعد ہٹا دیا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق سنہ 2018 میں جب یورپی ممالک میں مسلمان خواتین کے حجاب پر تنقید شروع ہوئی تو موجودہ برطانوی وزیراعظم بورس جانسن نے مسلمان خواتین کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

بورس جانسن نے 2018 میں اپنے ایک کالم میں برقع پہننے والی مسلمان خواتین کو ‘لیٹر باکس’ سے تشبیہ دی تھی جب کہ ایک اور موقع پر بورس جانسن مسلمان خواتین کو ‘بینک ڈکیت’ بھی کہہ چکے ہیں۔

برطانوی وزیراعظم کا یہ بیان فیس بک پر بگ برادر واچ (بی بی ڈبلیو) نامی ادارے نے پوسٹ کیا تھا۔

بی بی ڈبلیو نے اپنے جعلی اکاؤنٹ سے وزیراعظم کے جملے دہراتے ہوئے ایک پوسٹ شائع کی جس میں ایک برقع پوش خاتون کو دکھایا گیا، پوسٹ میں لکھا گیا کہ ’یہ بہت احمقانہ ہے کہ لوگ لیٹر باکس بن کر گھومتے پھریں۔

اس اکاؤنٹ کو بُلنگ اور ہراسگی پر مشتمل مواد شائع کرنے پر بند کر دیا گیا۔

واضح رہے کہ برطانیہ میں اکثر مسلمانوں کو تعصب کا نشانہ بنایا جاتا ہے، جس کا واضح ثبوت کنزرویٹو پارٹی کی سینیئر رہنما برطانیہ پہلی مسلمان خاتون وزیر نصرت غنی ہیں، جنہیں انڈر سیکرٹری کے عہدے سے ہٹانے کے بعد مسلمان ہونے کی وجہ تعصب کا نشانہ بنا گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں