The news is by your side.

Advertisement

جب فیض‌ کی گاڑی ایک گھر کی دیوار سے جا ٹکرائی!

فیض کا شمار ان شعرا میں ہوتا ہے جن کے انقلابی ترانے اور نظمیں آج بھی مقبول ہیں۔

اپنی فکر اور نظریے کی وجہ سے فیض‌ ہر خاص و عام میں یکساں‌ مقبول ہیں۔ فیض کی زندگی میں بھی ان کے چاہنے والے بے شمار تھے اور آج بھی ان کے فن اور شخصیت کے پرستار ہر سال ان کی یاد میں‌ فیض میلہ سجاتے اور دوسری تقریبات کا اہتمام کرتے ہیں۔ کسی کو فیض کی شخصیت میں کشش محسوس ہوتی ہے تو کوئی ان کی نظموں کا اسیر ہے۔ کسی کو ان کی انسان دوستی سے پیار ہے تو کوئی غزلوں کا دیوانہ ہے.

اردو زبان کے اس عظیم شاعر کے فن اور شخصیت کے علاوہ ان کی زندگی کے کئی اہم اور بعض دل چسپ پہلو بھی مختلف کتابوں میں پڑھنے کو ملتے ہیں۔ یہ واقعہ جو ہم آپ کے لیے پیش کر رہے ہیں، فیض احمد فیض کی شخصیت کا ایک شگفتہ اور خوش گوار پہلو ہمارے سامنے لاتا ہے۔

ایک رات فیض خیام سنیما، کراچی کی سڑک سے اپنے گھر لوٹ رہے تھے یا تو ان کی آنکھوں میں نیند ہوگی یا اس وقت ان پر کوئی شعر نازل ہورہا ہوگا۔ ان کی موٹر کی رفتار اچانک تیز ہوگئی، عین اسی وقت ایک طرف سے ایک گدھا گاڑی فراٹے بھرتی نمودار ہوئی، فیض کو فوراً تصفیہ کرنا تھا کہ اپنی موٹر گدھا گاڑی سے ٹکرائیں یا کسی گھر کی دیوار سے؟

گدھے کو بچانے کی خاطر فیض نے موٹر دیوار سے ٹکرا دی، دیوار کا کچھ حصہ منہدم ہوگیا، اہل خانہ کو معلوم ہوا کہ یہ فیض احمد فیض ہیں تو وہ اپنی دیوار گرنے سے بہت خوش ہوئے کہ کبھی ہم ان کو کبھی اپنے گھر کو دیکھتے ہیں۔ دوسرے دن انھوں نے فیض کو کھانے پر مدعو کیا، کلام سنا اور کہا.

جی تو یہ چاہتا ہے کہ یہ دیوار اسی طرح رہنے دیں کیوں کہ اسے فیض کی موٹر سے ٹکر کھانے کا شرف حاصل ہوا ہے مگر بدنما معلوم ہوگی، اس لیے آپ کی تشریف آوری کی خوشی میں ہم خود یہ دیوار بنوالیں گے آپ زحمت نہ کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں