The news is by your side.

Advertisement

جعلی اکاؤنٹس کیس: مزدور کے اکاؤنٹس سے 200 گاڑیاں خریدنے کا انکشاف

کراچی: نیب نے جعلی اکاؤنٹس کےذریعے منی لانڈرنگ کرنے کا بڑانیٹ ورک بے نقاب کیا ہے تاہم اس بار پاپڑ والے کی جگہ ایک مزدور استعمال ہوا ہے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے محمد اکبر نامی مزدور پر جعلی اکاؤنٹس کے ذریعے منی لانڈرنگ کا الزام عائد کیا گیا ہے، نیب نے نارتھ ناظم آباد کے رہائشی مزدور کو تحقیقات کےلیےنیب راولپنڈی طلب کرلیا ہے اور اسے نوٹس طلبی جاری کردیا ہے۔

نوٹس میں الزام عائد کیا گیا ہے کہ دو ہزار سولہ اورسترہ کےدرمیان جاپان سےچوری شدہ دو سو گاڑیاں خریدی گئیں، گاڑیوں کی خریداری کیلئے منی لانڈرنگ کے ذریعے رقم کی ادائیگی کی گئی۔

نیب کی جانب سے محمد اکبر نامی مزدور کو یہ دوسرا نوٹس طلبی بھیجا گیا ہے، اس سے قبل نیب نے پندرہ جون کو بھی کراچی کے مزدور کو تحقیقات کےلیےکال اپ نوٹس جاری کیا تھا اور اسے چوبیس جون کو دن گیارہ بجےتحقیقاتی ٹیم کےسامنےپیش ہونےکی ہدایت کی تھی۔

دوسری جانب محمد اکبر کا بھی موقف سامنے آیا ہے، مزدور اکبر کا کہنا ہے کہ کراچی میں شٹرنگ کا کام کرتا ہوں، جاپان کا نام سناہےکبھی نہیں گیا، ملازمت میں ناکامی کےبعد دو ہزار سترہ میں سعودی عرب سے واپس آیا تھا۔

نیب نوٹس سے متعلق محمد اکبر کا کہنا تھا کہ راولپنڈی جانے کے لیے کرائے کے پیسےنہیں کیسےجاؤں؟

یاد رہے کہ گذشتہ سال نیب لاہور نے صدر مسلم لیگ(ن) شہباز شریف کیخلاف منی لانڈرنگ کے حوالے سے مزید شواہد حاصل کئے تھے، اس دوران انکشاف ہوا تھا کہ شہباز شریف اور انکی فیملی کو پاپڑ فروش بھی کروڑوں روپے اکاؤنٹس میں منتقل کر تا رہا۔

نیب لاہور کے مطابق منظور پاپڑ فروش کے نام سے 13 لاکھ 69 ہزار 915امریکن ڈالڑز منتقل ہوئے، جو رپورٹ تحقیقاتی ٹیم نے بینکوں سمیت دیگر مالیاتی اداروں سےحاصل کی انکے مطابق 12 ٹرانزیکشن پر مشتمل ڈالرز پاکستانی روپوں میں 8 کروڑ 8 لاکھ 26 ہزار 141 روپے بنتے ہیں۔

 

Comments

یہ بھی پڑھیں