Fall of Dhaka
The news is by your side.

Advertisement

پاکستان کودولخت ہوئے پینتالیس سال بیت گئے

سقوط ڈھاکہ کوپینتالیس برس بیت گئے‘بھارت کی گھناؤنی سازش کے نیتجے میں سولہ دسمبرانیس سو اکہترکوپاکستان کا مشرقی بازوالگ ہوکربنگلہ دیش بن گیا۔

بنگلہ دیش بننے کے عمل کوقریب سے دیکھنے والوں کا کہنا ہے کہ مکتی باہنی بھارتی فوجیوں پرمشتمل تھی‘ بھارتی وزیراعظم نریندرمودی نے دورہ بنگلہ دیش میں فخریہ طورپراعلان کیا کہ پاکستان ہم نے توڑا۔

بنگلہ دیش کی جنگ آزادی، جسے بنگالی میں مکتی جدھو اور پاکستان میں سقوط مشرقی پاکستان یا سقوط ڈھاکہ کہا جاتا ہے، پاکستان کے دو بازوؤں، مشرقی و مغربی پاکستان، اور بھارت کے درمیان ہونے والی جنگ تھی جس کے نتیجے میں مشرقی پاکستان آزاد ہو کر بنگلہ دیش کی صورت میں دنیا کے نقشے پر ابھرا۔
جنگ کا آغاز 26 مارچ 1971ء کو حریت پسندوں کے خلاف پاک فوج کے عسکری آپریشن سے ہوا جس کے نتیجے میں مقامی گوریلا گروہ اور تربیت یافتہ فوجیوں (جنہیں مجموعی طور پر مکتی باہنی کہا جاتا ہے) نے عسکری کارروائیاں شروع کیں اور افواج اور وفاق پاکستان کے وفادار عناصر کا قتل عام کیا۔
مارچ سے لے کے سقوط ڈھاکہ تک تمام عرصے میں بھارت بھرپور انداز میں مکتی باہنی اور دیگر گروہوں کو عسکری، مالی اور سفارتی مدد فراہم کرتا رہا۔

بھارت کے ساتھ مل کرپاکستان کے خلاف سازش کے تانے بانے بین الاقوامی طورپربُنے گئے اور پاکستان کے خلاف بھارتی سازشیں آج بھی جاری ہیں۔

بنگلہ دیش میں رہنے والے پاکستان سے محبت کی سزا آج بھی پھانیسوں کی شکل میں پارہے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں