The news is by your side.

Advertisement

فرشتۂ اجل اور دو آرزوئیں

لبنانی نژاد امریکی خلیل جبران کو دنیا ایک ایک عظیم مفکر اور تخلیق کار کی حیثیت سے جانتی ہے جس نے نثر اور شاعری دونوں اصناف میں اپنی تخلیقات اور اختراع سے نام کمایا۔

لبنان کے اس نوجوان نے اپنے خاندان کے ساتھ امریکا ہجرت کی تھی جہاں فنونِ لطیفہ کی تعلیم مکمل کی اور ادبی سفر شروع کیا۔ خلیل جبران کے فلسفیانہ خیالات اور تخلیقات کا مغرب میں‌ بہت شہرہ ہوا اور بعد میں ان کے مضامین اور شاعری کا کئی زبانوں‌ میں‌ ترجمہ کیا گیا، انھیں‌ دنیا کے چند سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مصنفین میں شمار کیا جاتا ہے۔

خلیل جبران کی یہ تمثیل ان کی کتاب آنسو اور ایک مسکراہٹ (1914) سے لی گئی ہے جو آپ کے ذوقِ مطالعہ کی نذر ہے۔

دو آرزوئیں
رات کی گہری خاموشی میں فرشتۂ اجل، خداوند کے حضور سے زمین کی طرف اترتا ہے۔ شہر پر منڈلاتے ہوئے، وہ گھروندوں پر ایک طائرانہ نگاہ دوڑاتا ہے۔ اور خوابوں کے دوش پر اڑتی ہوئی روحوں کی پرواز ملاحظہ کرتا ہے اور نیند کے مزے لوٹتے فانی انسانوں کو دیکھتا ہے۔

جب ماہتاب افق پر سے روپوش ہوتا ہے اور شہر تاریکی میں ڈوب جاتا ہے تو فرشتۂ اجل گھروں میں سے اس بات کا خیال رکھتے ہوئے گزرتا ہے کہ کسی شے کو بھی نہ چھوئے، بالآخر وہ ایک عالی شان محل میں آن پہنچتا ہے۔

مقفل دروازوں کو بغیر چھیڑے عبور کرتے ہوئے وہ ایک امیر آدمی کے سرہانے جا کھڑا ہوتا ہے۔ اور پھر اپنی پیشانی پر موت کے سرد ہاتھ کا لمس محسوس کرتے ہی نیند میں ڈوبا ہوا شخص دہشت کے عالم میں اپنی آنکھیں کھول دیتا ہے۔

اور جب اس نے اپنے سرہانے اس عفریت کو دیکھا، تو وہ خوف اور غصہ کی ملی جلی کیفیت کے ساتھ بولا،” دفعہ ہو جاؤ، میرے ڈراؤنے خواب؛ میرا پیچھا چھوڑ دو اے بھیانک بھوت۔

کون ہو تم ؟ اور اس جگہ پر گھسے کیسے ہو؟ کیا چاہیے ہے تمہیں؟ میرے گھر سے فورا نکل جاؤ۔ میں اس گھر کا مالک ہوں اور میں اپنے غلاموں اور محافظوں کو بلا لوں گا اور انہیں تمہیں مارنے کا حکم دے دوں گا۔

فرشتۂ اجل نرم لیکن گرج دار آواز میں بولا، ” میں موت کا فرشتہ ہوں، اٹھو اور چلو میرے ساتھ!”

وہ شخص بولا، کیا چاہتے ہو تم؟

ابھی تک جب کہ میں نے اپنے دنیاوی کام دھندے ختم نہیں کیے ہیں تم کس لیے یہاں آن دھمکے ہو؟

میرے جیسے طاقت ور شخص کے پاس تم کیوں کر آئے ہو، جاؤ اور کسی کم زور اور لاچار شخص کے پاس جاؤ اور اسے اپنے سنگ لے جاؤ۔

”مجھے تمہارے خونی پنجوں اور کھوکھلے چہرے سے گھن آتی ہے، اور میری آنکھیں تمہارے مہیب استخوانی پروں اور مردار جسم کو دیکھنے کی روادار نہیں ہیں۔”

خوف و اضطراب کی اسی کیفیت میں تھوڑی دیر بعد وہ پھر گڑگڑایا، نہیں، نہیں، اے مہربان موت! میری اول فول باتوں کا برا نہ ماننا، کہ خوف کے عالم میں وہ سب بھی عیاں ہو جاتا ہے جس کو ہمارا دل چھپانا چاہتا ہے۔

میرے سونے چاندی کے خزانوں میں سے جو دل چاہے لے لو، یا میرے کچھ غلاموں کی روحیں قبض کر لو، پر خدارا! میری جاں بخشی کر دو۔ ابھی میری زندگی میں بہت سے کام کرنے باقی ہیں؛ ابھی بہت سے لوگوں نے میرے مال و اسباب لوٹانے ہیں؛ میرے جہاز میرا سامان لے کر ابھی بندرگاہ پر نہیں اترے؛ میری بس اتنی سی خواہش ہے کہ میری جان بخش دو۔”

اے موت! میرے حرم میں دنیا کی حسین ترین عورتیں موجود ہیں؛ ان میں سے تمہاری پسند کی کنیز میری طرف سے تمہارے لیے ایک تحفہ ہوگا۔ سنو اے موت میرا بس ایک ہی بیٹا ہے اور میں اسے بے حد چاہتا ہوں کہ زندگی میں میری خوشی صرف اسی سے وابستہ ہے۔میں اپنی سب سے قیمتی شے قربان کرتا ہوں۔ یوں کرو، میری جگہ اسے اپنے ساتھ لے جاؤ، پر مجھے چھوڑ دو۔

موت کا فرشتہ بولا،” تم امیر نہیں بلکہ قابلِ رحم حد تک غریب ہو۔”

پھر موت نے دنیا کے اس غلام کا ہاتھ پکڑا، اس کو فرشتوں کے حوالے کیا کہ وہ اسے اصل حقیقت کا مزہ چکھائیں۔

اور پھر فرشتۂ اجل غریبوں کی جھونپڑ پٹیوں میں سے چلتا ہوا سب سے مفلس شخص کے مکان پر پہنچا۔ گھر میں داخل ہو کر وہ ایک جوان کے بستر کے قریب پہنچا جو کہ دہرا ہو کر اپنے بستر پر لیٹا ہوا تھا۔ موت نے اس کی آنکھوں کو چھوا، جب اس جوان نے موت کو اپنے سرہانے دیکھا تو وہ اچھل کر اٹھ بیٹھا اور بھرپور محبت سے بولا،

” اے حسین موت! میں حاضر ہوں۔ میری رو ح کو قبول کرو۔

کیوں کہ تم میرے خوابوں کی آس ہو۔ ان کی تکمیل بنو! مجھے اپنے سینے سے لگا لو،
اے میری محبوب موت! تم بہت مہربان ہو؛ مجھے چھوڑ کے مت جاؤ۔

تم خداوند کی نامہ بر ہو، مجھے اس کے پاس لے چلو۔ تم صداقت کا سیدھا رستہ ہو اور دردمندی کا قلب ہو؛ مجھ سے غافل مت بنو۔

” میں نے بیسیوں بار تمہاری تمنا کی ، لیکن تم نہ آئیں؛ میں نے تمہاری چاہت کی مگر تم مجھ سے گریزاں ہی رہیں؛ میں تمہیں صدائیں لگاتا رہا مگر تم نے میری ایک نہ سنی لیکن اب تم نے میری عرض سن لی ہے- میری روح کو اپنے سینے سے لگا لو، محبوب موت!”

موت نے اپنے مہربان ہاتھ اس کے کپکپاتے ہوئے ہونٹوں پر رکھے، اس کی تمام تلخیوں کا خاتمہ کیا اور حفاظت سے لے جانے کے لیے اسے اپنے پروں میں سمیٹ لیا۔ اور آسمان کی طرف جاتے ہوئے ایک خاموش نصیحت کی۔

”صرف وہ لوگ ہی ابدیت حاصل کر پاتے ہیں ، جو زمین پر ابدی زندگی کے خواہاں ہوتے ہیں۔”

(اس تمثیل کے مترجم خلیل الرحمان ہیں)

Comments

یہ بھی پڑھیں