The news is by your side.

Advertisement

بھارتی بولر سے بدسلوکی؛ شائقین کلیر قرار

آسٹریلوی کرکٹ بورڈ نے سڈنی ٹیسٹ میں بھارتی مسلمان بولر محمد سراج کو نسلی تعصب کا نشانہ بنانے والے شائقین کو کلیئر قرار دے دیا۔

بھارت اور آسٹریلیا کے درمیان سڈنی ٹیسٹ کے تیسرے روز بھارتی کھلاڑیوں پر تماشائیوں کی جانب سے نسلی تعصب کے جملے کسے گئے۔

چار بھارتی کھلاڑیوں کی جانب سے نسلی تعصب کا شکار ہونے کی شکایت کی گئی، نسلی تعصب کا شکار ہونے والے کھلاڑیوں میں فاسٹ بولر محمد سراج بھی شامل تھے۔

فاسٹ بولر جسپریت بمرا کو بھی میچ کے دوران بھارتی کوچنگ اسٹاف سے بات کرتے ہوئے دیکھا گیا جب وہ آؤٹ فیلڈ میں کھڑے تھے جبکہ رہانے نے فیلڈ امپائر پال ولسن اور پال ریفل کو اس وقت بدسلوکی سے آگاہ کیا۔

شکایات پر کرکٹ آسٹریلیا نے مہمان کھلاڑیوں سے معذرت کرتے ہوئے الزامات کی تحقیقات کا آغاز کیا۔ پولیس شائقین کو اسٹیڈیم سے باہر لے گئی اور تفتیش کی۔

تحقیقاتی رپورٹ میں تسلیم کیا گیا ہے کہ محمد سراج کو نسلی تعصب پر مبنی جملوں کا سامنا کرنا پڑا لیکن حتمی طور پر کسی شائق کو قصور وار قرار نہیں دیا جا سکتا۔

آسٹریلوی بورڈ نے اپنی تحقیقاتی رپورٹ آئی سی سی کی گورننگ باڈی کو جمع کروا دی ہے تاہم کرکٹ آسٹریلیا نے فوری طور پر رپورٹ سے متعلق کسی بھی تبصرے یا ردعمل دینے سے انکار کیا ہے۔

واضح رہے کہ آسٹریلوی بورڈ واقعے پر پہلی ہی معذرت کر چکا تھا۔ ہیڈ آف انٹیگریٹی اینڈ سیکیورٹی شان کیرول نے ایک بیان میں کہا کہ”یہ انتہائی افسوسناک ہے کہ دو دوستانہ حریفوں کے مابین زبردست جذبے کے ساتھ مقابلہ ہوا، ایک عمدہ ٹیسٹ میچ دیکھنے کو ملا لیکن کچھ تمائشیوں کے عمل نے زبردست کھیل کو داغدار کر دیا ۔

انہوں نے کہا کہ کرکٹ آسٹریلیا مہمان کھلاڑیوں سے ہونے والے سلوک پر معذرت کرتا ہے اور نیوساؤتھ ویلز پولیس کے ساتھ ساتھ اپنے طور پر بھی الزامات کی تحقیقات جاری رکھے ہوئے ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں