The news is by your side.

Advertisement

شاہی ملکیت میں رہنے والا “نیلا ہیرا” ایک ہی منٹ میں نیلام

جینوا : تین سو برس پرانا شاہی ملکیت میں رہنے والا ہیرا ایک ہی منٹ میں نیلام ہوگیا  ،6.1 قیراط ہیرے کی قیمت صرف 6.7 ملین ڈالرز لگی، خریدار کی شناخت خفیہ رکھی گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق جینوا میں میں گزشتہ تین سو برس سے شاہی ملکیت میں رہنے والا ہیرا ’’فرنیس بلیو‘‘ نیلام کردیا گیا، خلاف توقع نیلامی شروع ہوتے ہی ایک ہی منٹ میں اس کی قیمت 6.7 ملین ڈالرز لگ گئی۔ تاہم ہیرا خریدنے والے کی شناخت خفیہ رکھی گئی ہے۔

خبر رساں ادارے کے مطابق 6.16 قیراط وزن کا حامل نیلے رنگ کا یہ ہیرا  1715 میں ہندوستان کی کانوں میں دریافت ہوا تھا، جسے اس وقت فرانس کے بادشاہ ڈیوک آف پرما نے اپنے بیٹی ایلیزیبیتھ فرنیس کو اس کی شادی پر تحفے میں دیا تھا۔

اس ہیرے کا مکمل نام ’فارنیس بلیو ڈائمنڈ‘ ہے۔

الزبتھ فارنیس نے 1715 میں اردن کے شہزادہ فلپ وی سے شادی کی تھی اور یہ شادی کا سب سے قیمتی تحفہ تھا۔

بعد ازاں یہ ‘نیلا ہیرا’ اس خاندان کی روایت بن گیا اور آنے والی نسلوں کو بطور تحفہ دیا جانے لگا اور پھر اردن سے فرانس، اٹلی اور پھر آسٹریا میں شاہی خاندانوں کی ملکیت میں رہا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

 

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں