The news is by your side.

پاکستان کا ڈیفالٹ رسک100فیصد سے اوپر جاچکا ہے، فرخ حبیب

اسلام آباد : پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما فرخ حبیب نے کہا ہے کہ ملکی معاشی حالت انتہائی خراب ہے، پاکستان کا ڈیفالٹ رسک100فیصد سے اوپر جاچکا ہے۔

یہ بات انہوں نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام اعتراض ہے میں میزبان صدف عبدالجبار سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہی، انہوں نے کہا کہ آج ایکسپورٹ18فیصد سے کم ہوگئی ہے جبکہ ہمارے دور میں25فیصد سے اوپر تھی، معاشی حالت انتہائی خراب ہے لیکن سب اچھا کا تاثر دیا جاتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ چیئرمین عمران خان نے اسی لیے کہا تھا کہ ہمارے پاس آئینی اختیار ہے، عمران خان پر قوم کیلئے جدوجہد کرنے پر قاتلانہ حملہ تک ہوگیا ہے, معیشت کابیڑاغرق ہورہاہےاورحکومت کوکوئی فکرہی نہیں ہے۔

فرخ حبیب نے کہا کہ جو شخص بھی پاکستان کی بہتری چاہتا ہے وہ فوری انتخابات کا مطالبہ کرتا ہے، گیلپ سروے میں65فیصد عوام نے کہا کہ فوری انتخابات ہونے چاہئیں۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ گیلپ سروے کے مطابق88فیصد عوام نے کہا ہے کہ ملک درست میں سمت نہیں جارہا،حکومت کولڈ شولڈر دے گی تو ہمارے پاس استعفوں کے علاوہ راستہ نہیں۔

ایک سوال کے جواب میں فرخ حبیب کا کہنا تھا کہ حکومت مذاکرات کی تجویز پر جواب نہیں دیتی تو ہمارے پاس اسمبلیاں توڑنے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں, ان کو معیشت کی فکرنہیں بس ان کو اپنے کیسزکی فکر ہے جو بند کرارہے ہیں۔

فرخ حبیب نے کہا کہ ارشد شریف کیخلاف16ایف آئی آر درج ہوتی ہیں اسی لیے اسے بیرون ملک جانا پڑتا ہے، بیرون ملک جاکر بھی اسے وہاں شہید کردیا جاتا ہے، سمیع ابراہیم، ایاز امیر پر سرعام تشدد کیا جاتا۔

انہوں نے کہا کہ بزرگ سینیٹر اعظم سواتی کو برہنہ کرکے ان پر بہیمانہ تشدد کیا جاتا ہے، اور گھر والوں کو ویڈیوز بھیجی جاتی ہیں لیکن جب عمران خان پر قاتلانہ حملہ ہوتا ہے تو ایف آئی آر بھی درج نہیں کی جاتی۔

پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا کہ جب سے یہ لوگ اقتدار میں آئے ہیں صرف ان کے کیسز بند ہوتے جارہے ہیں، آتے ہی ان کے کیسز کے بند ہونے کی بھرمار لگ گئی ہے۔

یہ لوگ پاکستان کو اس نہج تک لےجانا چاہتے ہیں کہ جہاں اسے کوئی اور نہ سنبھال سکے، ان لوگوں کا کیا جانا ہےان کی تو جائیدادیں اور بچے ملک سے باہر ہیں، یہ لوگ تو سزا بھی بیرون ملک کاٹتے ہیں کیونکہ بیمار ہوجاتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں