The news is by your side.

Advertisement

‘ لوٹے رہے نہ ہی این آر او، اب حکومت چھوڑ کر بھاگ رہے ہیں ‘

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما فرخ حبیب نے کہا ہے کہ لوٹے رہے نہ ہی این آر او، اب یہ حکومت چھوڑ کر بھاگ رہے ہیں۔

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور سابق مشیر اطلاعات فرخ حبیب نے مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کے جلسہ عام سے خطاب پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ کرپشن کی بنیادوں پر کھڑی تاریک سیاست دم توڑ رہی ہے، لوٹے رہے نہ ہی این آراو، یہ اب حکومت چھوڑ کر بھاگ رہے ہیں۔

فرخ حبیب نے کہا کہ آج مفرور قائد کی مصدقہ جھوٹی صاحبزادی کا لہجہ بتا رہا ہے کہ بھکاریوں اور غداروں کے ہاں صف ماتم بچھی ہوئی ہے، دن کے جلسوں میں ذلت کو رات اندھیرے میں چھپانے کی کوشش کی جارہی ہے لیکن جھوٹے اورغدارسمجھ لیں قوم بھکاریوں کے پیچھے نہیں نکلتی ہے۔

پی ٹی آئی رہنما نے مزید کہا کہ جھوٹی خاتون کو جلسےدیکھنے ہیں تو کراچی سے خیبر تک فوٹیج نکلوالیں، عوام نے کٹھ پتلیوں کیخلاف کپتان کے ساتھ کھڑے ہوکر بتادیا اور بیرونی اشاروں پر سیاست میں کٹھ پتلیوں کا تماشہ ابتدا ہی میں بکھر گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سزا یافتہ اور ضمانتوں پر رہا بھکاریوں نے ڈیڑھ ماہ میں معیشت کا بھرکس نکال دیا، ڈالر کی تیزتر پرواز کٹھ پتلیاں مسلط کرنے کا وبال ہے، اب عدالت کے فیصلےمیں لوٹے ناکارہ ہونے کے بعد سارا کھیل بگڑچکا ہے جبکہ عدالت میں آج کی کارروائی نےچوری حلال کی کوشش پر بھی پانی پھیر دیا ہے۔

فرخ حبیب نے کہا کہ انتخابات قوم کا واحد مطالبہ ہے، کٹھ پتلیوں کے ہاتھوں ملک کی تباہی گوارا نہیں، لوٹوں کے ووٹوں سے وزارت عظمیٰ ہتھیانے والا حساب دینے کی تیاری کرے اور جھوٹی خاتون سے تقریریں کرانے کے بجائے رسیدیں لانے کا کہا جائے۔

پی ٹی آئی رہنمانے مزید کہا کہ کل کپتان اپنی قوم کو آئندہ کا لائحہ عمل دیں گے اور عمران خان امپورٹڈ کٹھ پتلیوں کیلئے حتمی انجام کی نوید سنائیں گے۔

واضح رہے کہ سرگودھا میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے کہا کہ عوام پر مہنگائی کا طوفان لانے سے بہتر ہے حکومت چھوڑ دی جائے۔

یہ بھی پڑھیں: ’عوام پر مہنگائی کا طوفان لانے سے بہتر ہے حکومت چھوڑ دی جائے‘

دوسری جانب مسلم لیگ ن کے ہی سینئر رہنما اور سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے بھی آج اے آر وائی نیوز کے پروگرام آف دی ریکارڈ میں گفتگو کرتے ہوئے کہا اپنی حکومت کو مشورہ دیا ہے کہ اگر مشکل فیصلے نہیں کرنے تو پھر فوری نئے انتخابات کا اعلان کیا جائے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں